.

بشار کے کزن کو فائدہ پہنچانے کی خاطر شام میں "انٹرنیٹ کالنگ" بلاک کیے جانے کا امکان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں بشار حکومت کے زیر کنٹرول علاقوں میں عوامی حلقوں کے اندر وسیع پیمانے پر بے چینی اور تشویش پائی جا رہی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ شامی حکومت عوام کو حاصل انٹرنیٹ پر کال کی سہولت بلاک کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اس کا مطلب ہوا کہ شامی شہری مشہور سوشل میڈیا ایپلی کیشنز مثلا واٹس ایپ اور میسنجر وغیرہ کے ذریعے آڈیو اور وڈیو کال کی سہولت سے محروم ہو جائیں گے۔

شام کے اخبار "الوطن" (بشار الاسد کے ماموں زاد بھائی کا اخبار) کے مطابق بشار حکومت کے بعض عہدے داران نے منگل کے روز بتایا کہ انٹرنیٹ کالنگ پر واقعی کنٹرول کا امکان ہے ،،، خواہ یہ بلاک کرنے کے ذریعے ہو یا پھر حکمراں نظام کے اداروں کی مداخلت کے ذریعے عمل میں آئے۔

شام میں ٹیلی کمیونی کیشن اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل اباء عویشق کے مطابق "کال بلاک" کا موضوع واقعتا زیر غور ہے۔ عویشق نے انٹرنیٹ پر کال بلاکنگ کے امکان کا جواز پیش کرتے ہوئے کہا کہ آڈیو اور وڈیو کال کی سہولت پیش کرنے والی ایپلی کیشنز ملک میں لائسنس یافتہ ٹیلی کمیونی کیشن کمپنیوں کی آمدن کو متاثر کر رہی ہیں۔

شام میں سرکاری Syrian Telecommunication Company ملک مین لینڈ لائن اور انٹرنیٹ کی خدمات فراہم کر رہی ہے۔ اس کے علاوہ تین کمپنیاں ہیں جو موبائل فون اور انٹرنیٹ کی خدمات پیش کر رہی ہیں۔ ان میں اہم ترین کمپنی Syriatel ہے۔ یہ کمپنی 2000ء میں قائم ہوئی اور یہ بشار الاسد کے ماموں زاد بھائی اور کاروباری شخصیت رامی مخلوف کی ملکیت ہے۔

اس کے علاوہ دوسری اہم کمپنیMTN ہے جس کا آغاز 2007ء میں ہوا۔ یہ عالمیMTN گروپ کا حصّہ ہے۔

بشار حکومت نے 2017ء میں ایران کو شام میں اپنے زیر کنٹرول علاقوں میں موبائل آپریشنز کا پرمٹ جاری کیا تھا۔

شام میں انٹرنیٹ کالنگ کو بلاک کرنے کے امکان سے متعلق خبر پھیلنے کے ساتھ ہی شامیوں نے اس فیصلے پر اپنے شدید غم و غصّے کا اظہار کیا ہے۔ عوامی حلقے یہ سوال اٹھا رہے ہیں کہ اگر انٹرنیٹ کال بلاک کرنے سے عمومی نقصان شام کے عوام کو پہنچے گا تو پھر اس کی منظوری کی صورت میں کون سے فریق کو فائدہ پہنچے گا ؟

کہا جا رہا ہے کہ بشار الاسد اپنے کزن رامی مخلوف کو غیر قانونی طور پر "منافع خوری" کا موقع فراہم کرنے کے لیے یہ فیصلہ کرنے جا رہے ہیں۔ رامی مخلوف نے سیریا ٹیل کمپنی میں اپنے حصص کو فروخت کرنے کی خبر پھیلا کر اپنے خلاف یورپی اور امریکی پابندیوں کو چکمہ دینے کی کوشش کی۔ تاہم شامی اپوزیشن کے ذرائع نے باور کرایا ہے کہ رامی اب بھی کمپنی میں سے زیادہ بااختیار شخص ہے۔ بشار الاسد کی نوازشوں کے باعث کمپنی نے بھاری منافع حاصل کیا ہے۔