شام: ایران دریائے فرات کے مغرب میں عسکری اور مذہبی وجود کو مضبوط بنانے کے لیے کوشاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شام میں انسانی حقوق کے نگراں گروپ المرصد کے مطابق ایرانی ملیشیاؤں نے شام میں دریائے فرات کے مغرب میں اپنی موجودگی کی سطح کو بڑھا دیا ہے۔ اس طرح شام کے مشرق میں عراق کے ساتھ سرحد کے نزدیک البوکمال اور المیادین کے شہروں میں ان ملیشیاؤں کا وجود اب نمایاں ہو رہا ہے۔

المرصد نے بتایا ہے کہ ایرانی ملیشیاؤں کا وجود صرف عسکری حد تک محدود نہیں بلکہ علاقائی اور بین الاقوامی نگرانی سے دور رہنے کے مقصد سے دیگر جوانب کو بھی سموئے ہوئے ہے۔

شامی اراضی پر موجود ایران اور اس کی ملیشیائیں جن کے ہزاروں ارکان مختلف علاقوں میں پھیلے ہوئے ہیں، وہ سماجی اور تجارتی جانب بھی اپنے وجود کا دائرہ کار وسیع کرنے میں مصروف ہیں۔

المیادین کے علاقے میں ایران کے زیر انتظام افغانی ملیشیا مطبخ قائم کر کے مقامی لوگوں اور بے گھر افراد میں غذائی مواد تقسیم کر رہی ہے۔

علاوہ ازیں علاقے میں کبھی کبھار فرقہ وارانہ سیمینارز اور کانفرنسز کا بھی انعقاد کیا جاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں