.

کیا پاسداران انقلاب اور انٹیلی جنس صدر روحانی کی جاسوسی کرتے ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے ساتھ طے پائے جوہری معاہدے سے امریکا کے نکل جانے کے بعد ایرانی ریاست کے اہم اداروں کے درمیان باہمی رساکشی اور اختلافات بھی شدید تر ہوتے جا رہے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق دومئی 2018ء کو امریکا کے ایران کےساتھ طے پائے معاہدے سے علاحدگی کے بعد حکومت اور ایرانی رجیم کے کئی ادارے ایک دوسرے کے خلاف سرگرم ہیں۔ خاص طور پر سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے مقرب انٹیلی جنس اداروں اور سپاہ پاسداران انقلاب کی جانب سے صدر حسن روحانی پر سخت تنقید سامنے آئی ہے۔ ایرانی انٹیلی جنس ادارے اور پاسداران انقلاب حسن روحانی پر ایک ناکام جوہری معاہدہ کرنے اور ایران کی مشکلات میں اضافے کا سبب بننے کے الزامات عاید کرتے ہیں۔

تین ماہ قبل ایرانی پارلیمنٹ کے سخت گیررکن جواد کریمی قدوسی نے انکشاف کیا تھا کہ انٹیلی جنس ادارے صدر حسن روحانی کی جاسوسی کرتے ہیں۔ ان کے موبائل فون پر ہونے والی گفتگو کی مانیٹرنگ کی جاتی اور اسے ٹیپ کیا جاتا ہے۔ ایرانی محکمہ دفاع کے ایک دوسرے عہدیدار غلام رضا جلالی نے بھی کہا ہے کہ صدر حسن روحانی کے موبائل فون کی جاسوسی کی جاتی ہے تاہم یہ نہیں بتایا کہ آیا صدر کی جاسوسی کون کررہا ہے۔

خیال رے کہ غلام رضا جلالی کی زیرانتظام تنظیم دفاع سلبی ایران کی مسلح افواج کے زیرانتظام کام کرتی ہے اور اسے براہ راست سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی حمایت حاصل ہوتی ہے۔

خبر رسان‌ادارے "ایلنا" کے مطابق غلام رضا جلالی کا کہنا ہے کہ ایک حادثے کے بعد صدر حسن روحانی کے موبائل فون کی جاسوسی کی جاتی ہے۔ قبل ازیں 23 جولائی کو رکن پارلیمنٹ جواد کریمی قدوسی نے دعویٰ‌کیا تھا کہ پاسداران انقلان اورانٹیلی جنس ادارے صدر حسن روحانی کے موبائل فون اور دیگر سرگرمیوں پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔