.

امریکی پابندیوں کے بعد ایران کی ترکی کو موقع سے فایدہ اٹھانے کی دعوت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران نے امریکا کی طرف سے 5 نومبر کوتہران پر عاید کی جانے والی پابندیوں کے بعد ترکی سے کہا ہے کہ وہ اس موقع سے فایدہ اٹھائے۔

العربیہ کے مطابق انقرہ میں قائم ایرانی سفارت خانے کے کمرشل اتاشی سید حافظ موسوی کا کہنا تھا کہ ایران پر امریکی پابندیوں کے باعث ترکی کے لیے سنہری موقع ہے کہ وہ ایران میں اپنا وجود زیادہ مستحکم کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس وقت چین اور یورپ ایرانی مارکیٹ پر چھائے ہوئے ہیں۔امریکی پابندیوں کے بعد ترکی کے پاس موقع ہے کہ وہ ایرانی مارکیٹ میں اپنا اثرو نفوذ بڑھائے۔ اگر ترکی نے یہ موقع حاصل کرلیا تو وہ ایرانی منڈیوں میں اپنا تجارتی رسوخ بڑھانے میں کامیاب ہوجائے گا۔

مسٹر موسوی کا کہنا تھا کہ امریکا کی ایران پر عاید کردہ نئی پابندیوں کا زیادہ اثر نہیں پڑے گا کیونکہ ایران پہلے بھی انہی پابندیوں اور معاشی بندشوں کا سامنا کرچکا ہے۔

خیال رہے کہ امریکا نے 5 نومبر کو ایران پر پابندیوں کے دوسرے مرحلے کا اعلان کیا تھا۔ امریکا نے دوسرے مرحلےمیں فوری طور پر ایران کے700 اداروں اور شخصیات کو بلیک لسٹ کیا ہے۔ امریکی پابندیوں‌میں تیل اور توانائی کے شعبوں کو خاص طورپر ہدف بنایا گیا ہے۔

امریکا ایرانی تیل کی برآمدات کو صفر تک لانا چاہتا ہے۔ امریکا نے ترکی سمیت 8 ممالک کو ایران سے محدود سطح پر تیل سمیت دیگر شعبوں میں تجارت جاری رکھنے کی چھوٹ دی ہے مگر اگلے مراحلے میں ایران ان ممالک کو بھی تیل کی فروخت نہیں کرسکے گا۔