.

اسرائیل نے سرحدی علاقے میں سرنگوں کا کوئی ثبوت نہیں دیا: لبنان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان کی پارلیمان کے اسپیکر نبیہ بری نے کہا ہے کہ اسرائیل نے دونوں ملکوں کے درمیان سرحد پر حزب اللہ کی تعمیر کردہ سرنگوں کے بارے میں کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا ہے۔

نبیہ بری نے، جو حزب اللہ کے اتحادی ہیں، کہا ہے کہ اسرائیل نے معمول کے ہفتہ وار اجلاس کے دوران میں ان سرحدی سرنگوں کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی ہیں۔

دوسری جانب اسرائیلی فوج کے ترجمان افیخائی ادرعی نے بدھ کو نئی تصاویر جاری کی ہیں اور یہ دعویٰ کیا ہے کہ یہ لبنان کے ایک سرحدی گاؤں کفر کلا میں واقع ایک بلاک فیکٹری کی ہیں جہاں سے حزب اللہ کی ایک سرنگ کا آغاز ہوتا ہے۔

ادرعی کا کہنا ہے کہ یہ سرنگ سرحدی لکیر سے 40 میٹر اسرائیل کے اندر تک آتی ہے ۔انھوں نے اس سرحدی لکیر اور بلاک فیکٹری کی ایک 3 ڈی ویڈیو بھی اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر پوسٹ کی ہے۔

دریں اثناء اقوام متحدہ کے امن مشن نے کہا ہے کہ وہ حقائق کے تعیّن کے لیے ایک ٹیم اسرائیل بھیجے گا ۔اس نے سرحد کے ساتھ تمام مقامات تک مکمل رسائی دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

مشن نے کہا ہے کہ اس کی لبنانی اور اسرائیلی افواج کے ساتھ ہفتہ وار اجلاس میں اسرائیل کی مبیّنہ سرنگوں کی تلاش کے لیے سرگرمیوں کے بارے میں تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

اسرائیلی فوج نے منگل کے روز حزب اللہ کی تعمیر کردہ مبیّنہ سرنگوں کے سراغ اور انھیں تباہ کرنے کے لیے کارروائی شروع کی تھی۔اسرائیلی فوج کے ترجمان ادرعی کا کہنا ہے کہ یہ سرنگیں لبنان سے اسرائیل کے شمالی علاقے تک پھیلی ہوئی ہیں،انھوں نے فوجی کارروائی کی ویڈیو بھی ٹویٹر پر جاری کی ہے۔