.

ایران میں 12 قیدیوں کو پھانسی دے دی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران میں جیل میں قید سزائے موت کے کم سے کم 12 قیدیوں کو تختہ دار پر لٹکا دیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایران کے عدالتی ذرائع کے مطابق جمعرات کے روز کرمان جیل میں قید 12 قیدیوں کو دی گئی سزائے موت پرعمل درآمد کردیا گیا ہے، تاہم ان قیدیوں کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔

عدالتی ذرائع کا کہنا ہے کہ تختہ دار پر لٹکائے جانے والے بیشتر قیدیوں کو منشیات کے جرم میں سزائے موت سنائی گئی تھی۔

ادھر ایرانی خبر رساں ادارے "ھرانا" نے اپنی رپورٹ میں‌بتایا ہے کہ انسانی حقوق کے کارکنوں نے پھانسی پر چڑھائے گئے چھ ملزمان کی شناخت ظاہر کی ہے۔ کوھر کوہ کے رہنے والے عندالغنی قلندر زئی، یعقوب قلندر زئی جب کہ خاش شہر کے شہ بخش، جلیل خدا بخش اور یوسف جلال الدین کو منشیات کے دھندے کے الزام میں سزائے موت دی گئی۔

ھرانا کے مطابق سزائے موت پرعمل درآمد کے بعد میتیں ان کے ورثاء کے حوالے کردی گئی ہیں۔

خیال رہے کہ ایران کا شمار قیدیوں کو سزائے موت دینے دینے والےممالک میں سر فہرست ملکوں میں ہوتا۔

ایرانی جیلوں میں قید ایک بڑی تعداد ایسے سزا یافتہ ملزمان کی ہے جنہیں سیاسی بنیادوں پرحراست میں لیا گیا اور اس کے بعد ان کے خلاف سنگین جرائم کے تحت مقدمات چلا کرانہیں کڑی سزائیں دی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ ایران 18 سال سے کم عمر کے بچوں کو پھانسی دینے میں بھی بدنام ہے۔ گذشتہ برس ایک 17 سالہ لڑکی زینب سکاوند کو اپنے ہی شوہر کو قتل کرنے کے جرم میں پھانسی دے دی گئی تھی۔