دمشق کے ہوائی اڈے پر حملے کی متضاد اطلاعات

اسد رجیم نے پہلے حملے کی تصدیق پھر تردید کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کے دارالحکومت دمشق کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر نامعلوم طیاروں کے فضائی حملے کی متضاد اطلاعات ہیں۔

شام کے سرکاری ذرائع ابلاغ نے خبر دی تھی کہ دمشق کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب دشمن کا ایک فضائی حملہ ناکام بنا دیا گیا ہے تاہم کچھ دیر بعد یہ خبر واپس لے لی گئی۔

شام کی سرکاری خبر رساں ایجنسی "سانا" کے نامہ نگار کے حوالے سے خبر دی تھی کہ "دمشق" کے بین الاقوای اڈے کے قریب فضائی حملہ ناکام بنا دیا گیا ہے تاہم اس کے کچھ دیر بعد خبر رساں ایجنسی نے یہ خبر غائب کردی۔

سانا کے نامہ نگار نے بتایا کہ دمشق کے ہوائی اڈے پر فضائی آمد ورفت معمول کے مطابق جاری ہے اور کسی قسم کے حملے کی کوئی تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

ادھر 'اے ایف پی' نے شامی حکومت کے ایک باخبر ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ بہ ظاہر یہ غلطی سے کی گئی وارننگ ہوسکتی ہے۔

اتوار کی شام اسد رجیم کے ماتحت ذرائع ابلاغ نے کہا تھا کہ محکمہ دفاع نے دمشق ہوائی اڈے کے قریب دشمن کا حملہ ناکام بنا دیا گیا ہے۔

ادھر شام میں انسانی حقوق کی صورت حال پر نظر رکھنے والے ادارے "آبزرویٹری" نے الحدث چینل کو بتایا کہ دمشق ہوائی اڈے کے قریب میزائلوں سے بعض تنصیبات کو نشانہ بنایا گیا۔ ان میں سے بعض میزائل اپنے اہداف پر گرے ہیں۔

انسانیی حقوق کے آبزرور نے بتایا کہ دمشق کےبین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب زور دار دھماکوں کی آوازیں سنی گئی ہیں۔ یہ آوازیں ان میزائلوں کی ہیں جنہیں شامی ڈیفنس فورس نے قریب علاقے میں گرنے والے ایک مشوک ڈھانچے کو نشانہ بنانے کے لیے استعمال کیے تھے۔

انسانی حقوق کے ادارے کے مطابق تا حال دمشق کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب ہونے والی ان کارروائیوں میں کسی قسم کے جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں