.

سعودی عرب کا شہر "الاحساء" عرب دنیا کا سیاحتی دارالحکومت منتخب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے شہر الاحساء کو سال 2019 کے لیے عرب سیاحت کے دارالحکومت کے طور پر منتخب کر لیا گیا ہے۔ اس بات کا فیصلہ سیاحت سے متعلق عرب وزراء کی کونسل کے 21 ویں اجلاس میں ہوا۔ مصر کے شہر اسکندریہ میں منعقد اجلاس میں عرب ممالک کے وزراء سیاحت، عرب تنظیموں اور فیڈریشنوں کے سربراہان نے شرکت کی۔ متعلقہ کونسل کے مطابق الاحساء شہر وہ تمام شرائط پوری کرتا ہے جو اس اعزاز کے حصول کے واسطے مقرر کی گئی ہیں۔

اس موقع پر کونسل نے عرب ٹورزم آرگنائزیشن کے اعزازی سربراہ اور سعودی عرب میں سیاحت اور قومی ورثے کے امور کی جنرل اتھارٹی کے صدر شہزادہ سلطان بن سلمان بن عبدالعزیز کو ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری پیش کی۔ یہ ڈگری "عرب اکیڈمی فار سائنس ٹکنالوجی اینڈ میری ٹائم ٹرانسپورٹ" کی جانب سے ہیومن اینڈ سوشل سائنسز کے شعبے میں دی گئی۔

دوسری جانب عرب ٹورزم آرگنائزیشن کے صدر ڈاکٹر بندر بن فہد آل فہید نے باور کرایا کہ عرب وزراء سیاحت کی کونسل نے الاحساء کے تاریخی، ثقافتی اور سیاحتی مقام کا اعتراف کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ الاحساء کا 2019 کے لیے عرب سیاحت کا دارالحکومت چُنے جانے سے اس علاقے کے لیے اور بالخصوص سعودی عرب کے مشرقی صوبے کی ترقی اور سیاحت کے شعبے سے ہونے والی آمدنی میں اضافہ ہو گا۔

آل فہید نے توقع ظاہر کی کہ 2030ء تک عرب دنیا کا دورہ کرنے والے سیاحوں کی سالانہ تعداد 19.5 کروڑ تک پہنچ جائے گی جو کہ عرب دنیا کا رخ کرنے والے سیاحوں کی موجودہ تعداد کا تین گُنا ہو گی۔ انہوں نے باور کرایا کہ سیاحت ایک بڑی صنعت اور معیشت کے لیے آمدنی کا ایک اہم ذریعہ ہے۔ آل فہید کے مطابق سال 2017 کے دوران دنیا بھر میں سیاحوں کی مجموعی تعداد 1.2 ارب سے زیادہ رہی۔