.

حوثیوں اور یمنی حکومت کے درمیان تین امور پر اتفاق ہو گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سویڈن کے صدر مقام شہر اسٹاک ہوم میں یمنی حکومت اور حوثی ملیشیا کے درمیان ہونے والے براہ راست مذاکرات میں شریک یمنی وفد نے ’’العربیہ‘‘ کے نامہ نگار کو بتایا ہے کہ جمعرات کو اختتام پذیر ہونے والے مذاکرات میں تین امور پر فریقین میں اتفاق رائے ہو گیا ہے۔

اتفاق رائے کا پہلا نقطہ صنعاء ہوائی اڈے کو عدن اور سیئون کے ہوائی اڈوں کے ذریعے آپریشنل کرنا ہے۔ دوسرا موضوع معیشت اور سینٹرل بینک کی صورت حال میں بہتری لانا ہے جبکہ قیدیوں کے باہمی تبادلے کا معاملہ تیسرا اہم نقطہ ہے جس پر اتفاق رائے پیدا ہو گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ان تین امور کے علاوہ باقی موضوعات پر اتفاق رائے پیدا نہیں ہو سکا۔ ان میں سرفہرست الحدیدہ بندرگاہ کی صورتحال جوں کی توں ہے۔ نیز تعز شہر کا محاصرہ اور سیاسی حل کے لئے کسی فریم ورک کا طے کرنا بھی تک دم تحریر لاینحل مسائل میں شامل ہے۔ سرکاری وفد ان امور پر کسی اتفاق رائے کی راہ میں حوثی ملیشیا کو رکاوٹ قرار دے رہے ہیں۔

ادھر دوسری جانب اقوام متحدہ نے سیاسی تصفیئے، الحدیدہ پورٹ، صنعاء ہوائی اڈے، معیشت اور مذاکرات کے ٹرم آف ریفرنس پر مبنی مسودہ پیش کیا ہے۔

الحدیدہ بندرگاہ سے متعلق فریقین کے درمیان متضاد موقف پایا جاتا ہے۔ اس ضمن میں باغی ملیشیا کے رکن غالب مطلق نے دعوی کیا ہے کہ الحدیدہ پورٹ چلانے کے لئے اتفاق رائے پیدا ہو گیا ہے، تاہم یمنی وزیر ثقافت مروان دماج نے الحدیدہ کے حوالے سے یمنی حکومت کے موقف کا اعادہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم حوثی ملیشیا کا بندرگاہ کے انتظامی کنڑول ختم کرنے کے حق میں ہیں۔

صنعاء ہوائی اڈے کے بارے میں صورت حال ابھی تک گو مگو کی شکار دکھائی دیتی ہے۔ یمنی حکومت کے ایک عہدیدار نے دعوی کیا ہے کہ حوثیوں نے اندرون ملک پروازیں شروع کرنے کے لئے حکومتی تجویز مان لی ہے اور اس سلسلے میں پروازوں کی چیکنگ عدن میں ہوا کرے گی، تاہم حوثیوں کا مطالبہ ہے کہ اس عمل کی نگرانی خود یو این کرے۔