.

حوثی باغیوں کی نئی شرائط، تعز کا محاصرہ ختم کرنے میں رکاوٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سویڈن میں بدھ کے روز یمن کے متحارب فریقین کے درمیان جاری امن مذاکرات کے دوران حوثی باغیوں کی نئی شرائط سامنے آئی ہیں، جس کے بعد تعز شہر کا محاصرہ ختم کرنے کی کوششیں متاثر ہوئی ہیں۔

حوثیوں کی طرف سے کہا گیا ہے کہ تعز کا محاصرہ اسی صورت میں ختم کرنے میں مدد دی جاسکتی ہے بہ شرطیکہ حوثیوں کو وہاں سے محفوظ راستہ دیاجائے۔

ذرائع کے مطابق گذشتہ روزحوثیوں‌نے تعز میں جنگ بندی اور سرکاری فوج کے وہاں سے نکل کر60 کلو میٹر دور التربہ شہر چلے جانے کامطالبہ کیا۔ اس کے ساتھ ساتھ شہر کی تمام راہ داریاں بالخصوص مشرقی اور شمالی راستے۔ الحوبان او تعز اور صنعاء کو ملانے والی شاہراہ کھولنے کا مطالبہ کیا۔

دوسری جانب حکومتی وفد نے مشرقی تعز سے حوثی ملیشیا کے نکل جانے اور ملیشیا کو شہر سے 30 کلومیٹر دور ایک اڈے تک محدود ہونے پر زور دیا۔

باغیوں اور حکومت کی طرف سے پیش کی گئی تجاویز اور مطالبات پر غور کیا جا رہا ہے۔ اقوام متحدہ کے امن مندوب مارٹن گریفتھس فریقین کے درمیان ملک گیر جنگ بندی کے لیے قربت پیدا کرنے کی ہرممکن کوشش کررہے ہیں۔ اس کے علاوہ ان کی توجہ بارودی سرنگوں کی تلفی، شہریوں کی آزادانہ ایک سے دوسرے شہر میں نقل وحرکت اور جنگ سے متاثرہ علاقوں میں انسانی امداد کی فراہمی پر مرکوز ہے۔