قصرِ عوجا: سربراہان سے ملاقات کا مرکز اور سعودی عرب کا تاریخی مقام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

عالمی سربراہان اور فرماں رواؤں کے سعودی عرب کے دوروں کے موقع پر بین الاقوامی خبر رساں ایجنسیوں کی رپورٹوں میں "عوجا" کا نام آتا رہا ہے۔ سعودی فرماں روا اور خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی جانب سے اس مقام پر اہم ملاقاتیں اور فیصلے کیے گئے۔

"عوجا" کا نام پہلی سعودی مملکت کے آغاز کے ساتھ الدرعیہ ضلع کے تاریخی مقام کے ساتھ وابستہ ہے۔ یہاں پر مشہور قصرِ عوجا بنایا گیا جہاں شاہ سلمان متعدد فرما رواؤں اور سربراہان کا استقبال کر چکے ہیں۔

قصر عوجا کے مختلف جانبی راستوں میں مملکت کے بانی فرماں روا کی تاریخی تصاویر لگی ہوئی ہیں۔ علاوہ ازیں محل کی دیواروں، چھتوں اور فرشوں کو قدیم تاریخی اور تہذیبی نمونوں کے ساتھ سجایا گیا ہے۔

ریاض کی تاریخ کے محقق راشد بن محمد بن عساکر کہتے ہیں کہ "قصر عوجا وہ مقام ہے جہاں شاہ سلمان کچھ وقت گزارتے ہیں اور کئی سربراہان اور فرماں رواؤں کا استقبال کرتے ہیں۔ شاہ سلمان نے اس قصر کو عوجا کا نام دیا جو نجد کے امتیازی شہری طرز تعمیر پر بنایا گیا"۔

اس کے نام کے حوالے سے بن عساکر نے بتایا کہ "عوجا کا نام گھومی ہوئی بل کھائی وادی کو دیا جاتا ہے۔ الدرعیہ کو یہ نام اس لیے دیا گیا کہ وہ وادی حنیفہ میں بل کھائی صورت میں واقع ہے۔ جب بھی اہل عوجا کا ذکر کیا جاتا ہے تو ان سے مراد الدرعیہ کے لوگ ہوتے ہیں"۔

عوجا کا ذکر سعودی شعراء کے بہت سے کلاموں میں آیا ہے۔

یہ مملکت کے حکمراں خاندان آل سعود کے لیے استعمال ہونے والا پرانا خطاب ہے۔ لہذا جب اہل عوجا بولا جاتا ہے تو اس سے مراد آل سعود ہے۔

بن عساکر کے مطابق قصر عوجا کا محل وقوع وادی حنیفہ کے کنارے پر امتیازی حیثیت کا حامل ہے۔ یہ الطریف نامی محلے کے ساتھ ملحق ہے جہاں آل سعود پرانے وقتوں سے سکونت پذیر رہے۔ شاہ سلمان نے اپنے محل اور فارم کو عوجا کا تاریخی نام دے کر اسے ایک بار پھر جلا بخشی۔

بن عساکر بتاتے ہیں کہ قصر عوجا کے بیچوں بیچ ایک بڑا ہال ہے۔ اس کے اندر شاہ عبدالعزیز آل سعود کی تاریخی تصاویر آویزاں کی گئی ہیں۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں پر شاہ سلمان اپنے مہمانوں کے ہمراہ رہ کر انہیں ریاض کی تاریخ سے متعارف کرواتے ہیں اور مملکت کے بانی شاہ کی اپنے بعض بیٹوں کے ساتھ تصاویر دکھاتے ہیں۔ ہال میں 50 سے زیادہ تصاویر ہیں جو مختلف تاریخوں کی حامل ہیں۔

قصر عوجا کی دیواروں مرکزی طور پر صرف دو رنگوں میں رنگی ہوئی ہیں۔ ان میں ایک کِھلتا بُھورا یعنی مٹیالہ رنگ اور دوسرا اور دوسرا سفید رنگ ہے۔ علاوہ ازیں پرانے ساخت کے دروازوں پر مختلف رنگوں سے نقوش بنے ہوئے ہیں جو اپنے طور پر فن پاروں کی تصویر پیش کر رہے ہوتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں