الرکبان پناہ گزین کیمپ پرخوف کے سائے، امریکی خلاء اسد رجیم پرکرے گی!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

شام میں امریکی فوج کے انخلاء کے اعلان کے بعد امریکی فوج کی زیرنگرانی علاقوں میں اسد رجیم کے داخلے کے خدشات ہیں۔ دوسری جانب شامی اپوزیشن نے امریکی انخلاء کے اعلان پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی انخلاء سے پیدا ہونے والا خلاء اسد رجیم پُر کرے گی۔

اگرچہ شام میں امریکی فوج التنف ملٹری بیس اور اس سے ملحقہ علاقہ 55 تک محدود رہی ہے۔ اس علاقے کی ایک طرف سرحد اردن اور دوسری طرف عراق سے ملتی ہے۔ یہاں ایک شامی پناہ گزین کیمپ 'الرکبان' بھی قائم ہے۔ اس کیمپ کی نگرانی امریکی فوج کی معاونت سے شامی اپوزیشن کے پاس رہی ہے مگر اب حالات تیزی کے ساتھ بدل رہے ہیں۔ امریکی انخلاء کے بعد الرکبان کیمپ میں پناہ گزینوں کا کوئی پرسان حال نہیں ہوگا۔ یہی وجہ ہے کہ الرکبان کے مکینوں پرخوف اور دہشت کے سائے ہیں۔

الرکبان کے شہریوں نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے ٹیلیفون پر بات کرتے ہوئے کہا کہ اس علاقے میں امریکی عسکری مشیریوں‌کی موجودگی اسد رجیم کی عدم مداخلت کی ضمانت تھی۔ یہاں سے امریکی فوج کے نکلنے کا مطلب یہاں پر اسد رجیم کو داخل ہونے کا موقع دینا ہے۔

مقامی نوجوانوں کا کہنا ہے کہ اسد رجیم الرکبان میں گھس کر گرفتاریاں کرے گی اور شامی اپوزیشن کے حامیوں کو انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنایا جائے گا۔ انہیں جیلوں میں‌ڈالر کر تشدد کا نشانے کا خدشہ ہے۔ اس کے علاوہ اسد رجیم الرکبان کے نوجوانوں کو فوج میں‌ جبری طورپر بھرتی کرسکتی ہے۔

شامی اپوزیشن کے ایک ذریعے نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ امریکی فوج کے انخلاء سے علاقے میں ایک نیا المیہ رونما ہوسکتا ہے۔اپوزیشن کے حامی کرنل مہند الطلاع نے العربیہ ڈات نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں امریکی فوج کی طرف سے انخلاء کا ایک زبانی پیغام ملا ہے۔ ان کاکہنا تھاکہ فی الحال امریکی فوج نے واپس کا سفرشروع نہیں کیا ہے۔

امریکی صدر نے 60 سے 100 دنوں کے اندر اندر شام سے فوج واپس بلانے کا اعلان کیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ وہاں پر شامی اپوزیشن کا مستقبل مخدوش ہے۔ ان شامی اپوزیشن گروپوں کو امریکا کی طرف سے عسکری، لاجسٹک اور مادی مدد ملتی رہی ہے اور اب وہ الرکبان کیمپ میں محصور ہو کررہ گئے ہیں۔ الرکبان پناہ گزین کیمپ میں 60 ہزار شہری پناہ لیے ہوئے ہیں اور سنہ 2014ء سے لوگ اس کیمپ میں رہ رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں