بحرین: عراقی سفارت خانے کے ناظم الامور کی طلبی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بحرین میں وزارت خارجہ نے منامہ میں عراقی سفارت خانے کے ناظم الامور نہاد رجب عسکر کو طلب کر لیا ہے۔ وزارت خارجہ کے سکریٹری برائے علاقائی تعاون وحید مبارک سیار نے باور کرایا ہے کہ مملکت بحرین عراق میں اسٹیٹ آف لاء اتحاد کے سربراہ نوری المالکی (سابق عراقی وزیراعظم اور سابق نائب صدر) کے بیان کی سخت مذمت کرتے ہوئے اسے مملکت بحرین کے داخلی معاملات میں کھلی اور ناقابل قبول مداخلت قرار دیا ہے۔

بحرین کی سرکاری خبر رساں ایجنسی BNA کے مطابق وزارت خارجہ کے سکریٹری نے عراقی ناظم الامور کو آگاہ کیا کہ اس نوعیت کا غیر ذمے دارانہ بیان بین الاقوامی قانون کے بنیادی اصولوں اور منشوروں کی صریح خلاف ورزی ہے جو دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کا تقاضا کرتے ہیں۔ ساتھ ہی یہ مملکت بحرین اور جمہوریہ عراق کے درمیان برادرانہ تعلقات کو ضرر پہنچانے کی کوشش ہے۔

وزارت خارجہ کے سکریٹری وحید مبارک سیار کے مطابق نوری المالکی کی جانب سے بغداد میں ایک دہشت گرد گروپ کے دفتر کی تاسیس کی تقریب میں شرکت اور اس گروپ کی سپورٹ بحرین کے اندرونی معاملات میں کھلی مداخلت ہے جس کسی طور بھی قابل قبول نہیں۔ اس لیے کہ " ائتلاف شباب ثورة 14 فبراير" نامی اس گروپ کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل کیا جا چکا ہے۔ لہذا یہ سپورٹ ایسے لوگوں کے ساتھ صف بندی کی کوشش ہے جو نہ صرف بحرین بلکہ دیگر عرب ممالک اور عوام کے خلاف انارکی، تشدد اور دہشت گردی کی لہر بھڑکانا چاہتے ہیں۔

سیار نے زور دے کر کہا کہ مملکت بحرین نے ہمیشہ سے دیگر ممالک کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کی روش اپنائی ہے۔ انہوں نے عراقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ اس نوعیت کے بیانات پر اور اپنی سرزمین پر دہشت گرد قرار دی جانے والی تنظیموں اور گروپوں کی تقریبات اور فورموں کے انعقاد پر روک لگائے تا کہ دونوں برادر ملکوں کے تعلقات کو کسی طرح کا ضرر نہ پہنچے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں