.

اصلاح پسند رہ نما کا خامنہ ای سے ملاقات کی تفصیلات جاری کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

گھر پر نظر بند اصلاح پسند رہ نما اور سبز انقلاب تحریک کے سرخیل میر حسین موسوی نے سنہ 2009ء کے انتخابات کے بعد رہبر انقلاب آیت اللہ علی خامنہ ای کے ساتھ ہونے والی ملاقات کا احوال بلا کم وکاست عوام کے سامنے پیش کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق میر حسین موسوی نے جمعرات کے روز ایک بیان میں کہا میرا مطالبہ ہے کہ سنہ دو ہزار نو کے صدارتی انتخابات کے بعد اسلامی جمہوریہ ایران کے سریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے ساتھ ہونے والی میری ملاقات کا پورا احوال کسی کمی بیشی کے بغیر عوام کے سامنے پیش کیا جائے۔

میر حسین موسوی کی طرف سے یہ چیلنج ایک ایسے وقت میں دیا گیاہے جب ایرانی سپریم لیڈر کے مقرب ذرائع ابلاغ نے ایک فوٹیج نشر کی ہے جس میں خامنہ اور میر حسین موسوی کی 21 جولائی 2009ء کی ایک ملاقات دکھائی گئی ہے۔ اس ملاقات میں حسین موسوی کو انتخابی نتائج مسترد کرتے سنا جاسکتا ہے۔

خیال رہے کہ اصلاح پسند رہ نما میر حسین موسوی 2009ء میں صدارتی انتخابات کی دوڑ میں شامل تھے مگر سخت گیر محمود احمدی نژاد ان انتخابات میں کامیاب قرار پائے۔ اصلاح پسندوں‌ نے انتخابی نتائج یہ کہہ کر مسترد کردیے تھے کہ ان میں ریاست کی مداخلت سے وسیع پیمانے پر دھاندلی کی گئی ہے۔

انتخابات کے بعد 12 جولائی سے 21 جولائی 2009ء کے دوران مہدی کروبی اور میر حسین موسوی کی قیادت مین وسیع پیمانے پرملک گیر مظاہرے ہوئے۔ تاہم 15 جون کو تہران میں ایک جلوس میں‌ لاکھوں شہروں نے احتجاج کیا تھا۔