.

سستی مرغی کے حصول کے لیے ایران میں شہریوں کی لمبی لمبی قطاریں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سماجی رابطوں کی ویب سائیٹس پر ایران میں غربت کی ایک اور زندہ تصویر دیکھی جا رہی ہے۔ سوشل میڈیا پر ایران میں شہریوں کی لمبی لمبی لائنیں لگئی ہوئی ہیں۔ یہ قطاریں ان لوگوں کی ہیں جو حکومت کی طرف سے سبسڈی کے تحت دی جانےوالی سستی مرغی کےایک کلو گوشت کےحصول کے لیے گھٹنوں اپنی باری کا انتظار کرتے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایران میں ایک کلو چکن کے حصول کے لیے شہریوں کی لمبی لائنیں ملک میں موجود غربت کا واضح ثبوت ہیں کہ شہری ایک کلو چکن خرید کرنے کی سکت بھی نہیں رکھتے ہیں۔

ایران میں سماجی کارکنوں نے سسے چکن کے حصول کے لیے شہریوں کی لمبی لمبی قطاروں کی تصاویر اور ویڈیوز شیئرکی ہیں۔ یہ تصاویر تہران کےقریبی شہر اراک میں لی گئی ہیں۔ مقامی شہریوں کا کہنا ہے کہ غیرملکی پابندیوں کے نفاذ کے بعد ایران میں سرخ گوشت کی قیمتیں بھی آسمان کو چھو رہی ہیں۔

ایران کے مرکزی بنک کے مطابق روز مرہ خوراک اور مشروبات کی قیمتوں میں 60 فی صد اضافہ ہوا ہے۔ دوسری جانب مقامی سطح پر خوراک کی پیدوار کی صلاحیت بھی متاثر ہوئی ہے۔

ایک طرف ایرانی عوام کا یہ حال ہے کہ وہ ایک کلو چکن کے حصول کے لیے لمبی لمبی قطاروں میں لگ کر سستا گوشت حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں اور دوسری طرف ایران شام کی تعمیر نو اور شامی عوام کی خوراک کی کفالت کا دعویٰ کرتا ہے۔

گذشتہ ہفتے ایرانی پارلیمانی ریسرچ سینٹر کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں‌بتایا گیا تھا کہ افراط زر قابو سے باہر ہوچکاہے جس کے نتیجے میں مہنگائی میں اضافہ اور روز مرہ کے استعمال کیا اشیاء کی قیمتیں بھی شہریوں کی پہنچ سےدور ہورہی ہیں۔