.

سعودی ولی عہد اور امریکی وزیر خارجہ یمن میں سویڈن معاہدے پر عمل درامد کی ضرورت پر متفق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی ولی عہد شہزاد محمد بن سلمان اور امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے یمن میں سویڈن معاہدے پر عمل درامد کی ضرورت پر اتفاق رائے کا اظہار کیا ہے۔ یہ بات ریاض میں امریکی سفارت خانے کی جانب سے پیر کے روز جاری ایک بیان میں بتائی گئی۔

مذکورہ موقف سعودی ولی عہد کی پومپیو سے ملاقات کے دوران سامنے آیا۔ امریکی وزیر خارجہ اپنے مشرق وسطی کے دورے میں اتوار کی شام ریاض پہنچے تھے۔

سفارت خانے کے ٹویٹر اکاؤنٹ پر جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ پومپیو اور سعودی ولی عہد یمن میں جارحیت میں کمی کا سلسلہ جاری رکھنے پر متفق ہیں۔ دونوں شخصیات نے یمن کے لیے جامع سیاسی حل کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

امریکی سفارت خانے کی ٹویٹ میں کہا گیا کہ "ملاقات میں یمن میں حالات کو پرسکون رکھنے، سویڈن معاہدے کی شقوں تک محدود رہنے اور بالخصوص الحدیدہ میں فائر بندی اور نئی صف بندی کی ضرورت پر اتفاق رائے کیا گیا"۔

امریکی بیان کے مطابق پومپیو نے یمن میں اقوام متحدہ کے سیاسی عمل کی سپورٹ پر سعودی عرب کا شکریہ ادا کیا۔

اس سے قبل امریکی وزارت خارجہ یہ اعلان کر چکی ہے کہ واشنگٹن اور ریاض یمن میں سیاسی پیش رفت کی سپورٹ پر متفق ہیں ،،، اور دونوں ممالک اپنے بیچ قائم تزویراتی شراکت داری کی بنیاد پر خطوط استوار کرنے کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔

پومپیو اتوار کی شام سعودی عرب پہنچے تھے۔ ہوائی اڈے پر ان کا استقبال واشنگٹن میں سعودی سفیر شہزادہ خالد بن سلمان اور سعودی وزیر مملکت برائے خارجہ امور عادل الجبیر نے کیا۔

عادل الجبیر سے ملاقات کے دوران مائیک پومپیو نے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے ذمے دار عناصر کے احتساب اور ایران کی "شر انگیزی پر مبنی سرگرمیوں" کا مقابلہ کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔