.

ایران مدار میں سیٹلائٹ چھوڑنے میں ناکام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران زمین کے مدار میں سیٹلائٹ چھوڑنے کی کارروائی میں ناکام ہو گیا۔ اس بات کا اعلان ایران کے ٹیلی کمیونی کیشن کے وزیر محمد جواد آذری جہرمی نے منگل کے روز سرکاری ٹی وی پر کیا۔ واضح رہے کہ امریکا نے ایران کو اس اقدام سے خبردار کیا تھا۔

جہرمی کے مطابق سیٹلائٹ کو لے کر جانے والے راکٹ "پیام" نے پہلا اور دوسرا مرحلہ کامیابی سے طے کر لیا تھا تاہم وہ تیسرے مرحلے میں پہنچنے میں کامیاب نہیں ہو سکا جس کا مطلب ہے کہ "پیام" مدار میں نہیں ٹھہر سکا۔

چند روز قبل ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا تھا کہ آئندہ ہفتوں میں ایران ملکی ساختہ لانچر کے ذریعے دو نئے سیٹلائٹس کو خلا میں بھیجے گا۔ روحانی نے واضح کیا تھا کہ "پیام" زمین کی سطح سے 600 کلو میٹر کے مدار میں رہے گا۔ یہ ایران کی جانب سے طویل فاصلے کا پہلا سیٹلائٹ ہو گا اور وہ روزانہ ایران کے اوپر سے 6 چکر لگایا کرے گے۔

ادھر امریکا کو بین البراعظمی میزائلوں کے ذریعے سیٹلائٹ بھیجے جانے کے ایرانی ارادے پر سخت تشویش ہے۔ امریکا کو خدشہ ہے کہ تہران اس کی آڑ میں نیوکلیئر وار ہیڈز لے جانے والے بیلسٹک میزائل تیار کر سکتا ہے۔

ایران کے میزائل پروگرام کے خطرے کے حوالے سے امریکا، برطانیہ، فرانس اور جرمنی نے ایک موقف اختیار کر لیا ہے اور یہ ممالک اس پروگرام کو خطے میں ایران کی تخریب کاریوں کا حصہ شمار کرتے ہیں۔