.

تنخواہوں کی عدام ادائیگی پر ہڑتال کا مطالبہ کرنے والا ٹیچر حوثیوں کے ہاتھوں اغوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے مغربی صوبے المحویت میں حوثی ملیشیا نے ایک اسکول ٹیچر کو اغوا کر لیا۔ مذکورہ ٹیچر نے تمام ٹیچروں سے مطالبہ کیا تھا کہ جب تک انہیں ستمبر 2016 سے روکی ہوئی تنخواہوں کی ادائیگی نہیں کر دی جاتی ،،، وہ تدریسی عمل کی ہڑتال کر دیں۔

یمنی میڈیا نے صوبے میں تعلیم و تربیت کے محکمہ کے ایک خاص ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ حوثیوں نے المحویت ضلع میں واقع النصر اسکول کے ٹیچر بلال علیان کو بلا کر فیس بک پر ایک پوسٹ کے بارے میں پوچھ گچھ کی۔ اس پوسٹ میں بلال علیان نے تمام استادوں سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ تنخواہوں کی عدم ادائیگی پر احتجاج کے طور پر ہڑتال کر دیں۔

ذریعے کے مطابق یہ واقعہ جمعرات کے روز پیش آیا۔ حوثیوں نے بلال علیان کو روپوش کر دیا اور وہ اس دن کے بعد اپنے گھر نہیں لوٹا۔ علیان کے اہل خانہ حوثیوں کو یقین دہانی کی کوشش کر رہے ہیں کہ علیان آئندہ تنخواہوں کی ادائیگی کا مطالبہ نہیں دہرائے گا۔

یمن کے عارضی دارالحکومت عدن میں وزارت تعلیم نے اس امر کی تصدیق کی تھی کہ حوثی جماعت اُن ماہانہ مالی رقوم کی تقسیم میں رکاوٹ بن گئی جن کو اقوام متحدہ کے تعاون سے حوثیوں کے زیر کنٹرول علاقوں میں استادوں کی واجب الادا تنخواہوں کے طور پر پیش کیا جانا تھا۔