حوثی لیڈر یمن میں ایرانی تیل کی خریدو فروخت میں سرگرم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اقوام متحدہ کی جانب سے یمن میں حوثیوں کی ایرانی تیل کی سپلائی کی رپورٹ کے بعد انکشاف کیا گیا ہے کہ حوثیوں کی لیڈرشپ ملک میں ایرانی تیل کی خریدو فروخت میں تیزی کے ساتھ سرگرم ہے۔

العربیہ چینل کی رپورٹ کے مطابق تجزیہ نگار ماجد المذحجی نے کہا کہ حوثیوں کے ترجمان اور ان کے مذاکراتی وفد کے سربراہ محمد عبدالسلام کے بھائی یمن میں ایرانی تیل کی فروخت میں سرگرم ہے۔

المذحجی کا کہنا تھا کہ پوری عالمی برادری جانتی ہے کہ ایران حوثیوں کو اسلحہ کی فراہمی کے ساتھ ساتھ ان کے ذریعے یمن کو تیل کی سپلائی کی کوشش کررہا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں تجزیہ نگار کا کہنا تھا کہ حوثیوں کے پاس پیشہ وارانہ مہارت کی شدید قلت ہے۔ عالمی برادری کے ساتھ تعاون اور تعلقات کے حوالے سے وہ مفاہمت کے بجائے ٹکرائوکی پالیسی پر عمل پیرا ہیں۔ اس کی تازہ مثال یمن میں اقوام متحدہ کے مبصر مشن کے سربراہ جنرل پیٹرک کامیراٹ کے قافلے پر حوثیوں کی فائرنگ سے لی جاسکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں