.

ایران کو کان سے پکڑ کر شام سے باہر کر دیں گے : اسرائیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کے ہاؤسنگ کے وزیر یوآف گیلنٹ کا کہنا ہے کہ "اسرائیل ،،، ایران کو شام سے باہر نکال دے گا"۔

ایک اسرائیلی ویب سائٹ کے مطابق شام کے ساتھ شمالی سرحد پر ہونے والے سکیورٹی واقعات پر تبصرہ کرتے ہوئے گیلنٹ نے کہا کہ "اسرائیل شام میں کسی ایرانی فوج کی تاسیس کی اجازت نہیں دے گا"۔

اسرائیلی وزیر نے مزید کہا کہ "ہم ایران کو شام سے نکال دیں گے اور ہم حزب اللہ کو گولان کی پہاڑیوں میں ایک اور محاذ نہیں کھولنے دیں گے"۔

یہ بیان اتوار اور پیر کی درمیانی شب شام میں متعدد ٹھکانوں پر اسرائیلی فضائی حملوں کے بعد سامنے آیا ہے۔ اسرائیل کا دعوی ہے کہ نشانہ بنائے گئے ٹھکانوں کا تعلق ایران کی القدس فورس سے ہے۔

اسرائیلی فوج نے پیر کے روز اپنے ایک اعلان میں کہا کہ حالیہ حملے شام کی جانب سے مقبوضہ گولان کی پہاڑیوں کی طرف داغے جانے والے میزائلوں کے جواب میں کیے گئے ہیں۔

دوسری جانب ایران نے "اسرائیل کو مٹا دینے" کی دھمکی دی ہے۔ ایران کی فضائیہ کے کمانڈر بریگڈیئر جنرل عزیز نصیر زادہ نے پیر کے روز کہا ہے کہ ان کا ملک اسرائیل کے ساتھ لڑائی اور اسے صفحہ ہستی سے مٹا دینے کا بے تابی سے منتظر ہے۔

ایران میں ینگ جرنلسٹ کلب خبر رساں ایجنسی کے مطابق نصیر زادہ کا کہنا ہے کہ ایرانی فضائیہ کے نوجوان مکمل طور پر تیار ہیں اور صہیونی نظام کا مقابلہ کرنے کے لیے بے تابی سے انتظار کر رہے ہیں تا کہ کرہ ارض کو اس کے وجود سے پاک کر دیں۔

یاد رہے کہ ایران ایک طویل عرصے سے اسرائیل کا دشمن ہے تاہم دونوں ملکوں کے درمیان اب تک کوئی براہ راست تصادم واقع نہیں ہوا۔ البتہ 2011 میں شام کی جنگ شروع ہونے کے بعد اسرائیل کئی بار شام میں ایرانی اہداف کو نشانہ بنانے کا اعلان کر چکا ہے۔