.

سعودی عرب 5 فروری کو پہلا مواصلاتی سیٹلائیٹ خلاء میں بھیجے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے تعاون سے تیار ہونے والے پہلے مواصلاتی سیٹلائیٹ کو 5 فروری 2019ء کو خلاء میں بھیجنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی عرب کا پہلا مواصلاتی سیٹلائیٹ SGS1 شمالی امریکا میں قائم فرانسیسی اڈے سے سعودی عرب کے معیاری وقت کے مطابق رات 11:55 پر خلاء میں بھیجا جائے گا۔

سعودی عرب کے شاہ عبدالعزیز سائنس وٹیکنالوجی سٹی کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ سیٹلائیٹ امریکا کی لاک ہیڈ مارٹن کمنی اور سعودی عرب کے انجینیروں کی مشترکہ مساعی سے تیار کیا گیا ہے۔ سعودی عرب کے ماہرین کو بھی لاک ہیڈ مارٹن کے زیراہتمام تربیت دی گئی تھی۔

خیال رہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے اپریل 2018ء کو امریکی کمپنی لاک ہیڈ مارٹن کے سان فرانسیسکو میں قائم ہیڈ کواٹر کا دورہ کیا تھا۔ اس دوران انہوں نے امریکا اور سعودی عرب کے اشتراک سے تیار ہونے والے مصنوعی سیارے کے آخرے حصے پر "فوق ھام السحب" کے الفاظ تحریر کیے تھے۔

امریکا اور سعودی عرب کے مشترکہ سیٹلائیٹ کے خلاء میں بھیجے جانے سے سعودی عرب کو ٹیلی ویژن، ٹیلیفون، انٹرنیٹ، مواصلات، ملٹری سیکیورٹی، آفت زدہ علاقوں اور دیہی علاقوں میں ٹیلیکام کی سہولیات کی فراہمی میں مدد مدلے گی۔ اس سیٹلائیٹ کو سعودی عرب کے اندر سے آپریٹ اور کنٹرول کیا جائے گا۔