.

امریکی پابندیوں کے باعث ناروے کا مسافر طیارہ ایران میں پھنس گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ناروے کی فضائی کمپنی 'نارویجن شٹل' کا کہنا ہے کہ اس کا ایک مسافر بردار طیارہ 'بوئنگ 737' ایران میں ہنگامی لینڈنگ کے بعد وہاں پھنس کر رہ گیا ہے۔ طیارے کے انجن میں خرابی کے باعث اسے تہران میں ہنگامی طور پر اتارا گیا تھا مگر کمپنی ایران پر امریکا کی عاید کردہ پابندیوں کے باعث مطلوبہ سامان اورسپیئر پارٹس ایران بھجوانے میں‌ ناکام ہے۔

خیال رہے کہ ناروے کی ایئرلائن کا مسافر طیارہ 14 اکتوبر کے لیے اوسلو روانہ ہوا۔ طیارے پر 192 مسافر سوار تھے۔ فضاء سفر کے دوران طیارے کے ایک انجن میں خرابی پیدا ہوئی اور اسے ہنگامی طور پر جنوب مغربی ایرانی شہر شیراز میں اتارنا پڑا۔

نارویجن فضائی کمپنی کے ترجمان اینڈریسن ھگورنھولم نے 'اے ایف پی' کو بتایا کہ کمپنی ایران میں پھنسے طیارے کی واپسی کے لیے مختلف چینلز سے کوششیں‌ کر رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ طیارے پر سوار مسافر اگلے روس متبادل پروازوں سے اوسلو پہنچا دیئے گئے تھے تاہم 'بوئنگ 737 میکس' ابھی تک ایران میں پھنسا ہوا ہے۔ ذرائع کے مطابق تکنیکی ماہرین کو طیارے میں پیدا ہونے والی خرابی دور کرنے میں اس لیے ناکامی کا سامنا ہے کہ کمپنی مذکورہ سپیرپارٹس ایران نہیں بھجوا سکتی جب کہ ایران میں مقامی مارکیٹ میں وہ پرزے موجود نہیں ہیں۔

خیال رہے کہ گذشتہ برس امریکا نے ایران کے ساتھ پائے جوہری معاہدے سے علاحدگی اختیار کرنے کے بعد ایران پر سابقہ اقتصادی پابندیاں بحال کر دی تھیں۔ پابندیوں میں ایران کی فضائی سروس اور اس کے متعلقہ شعبہ جات بھی شامل ہیں۔

ناروے کے طیارے کے ایران میں پھنس جانے پر سوشل میڈیا پر بھی بحث چل رہی ہے۔ ایک صارف نے مزاحیہ پیرائے میں لکھا ہے کہ 'ایران ٹرائی اینگل بن گیا ہے جو طیارے غائب کر دیتا ہے۔