.

سعودی عرب میں دہشت گردی کی فنڈنگ روکنے کے لیے نیا نظام نافذ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی حکومت نے دہشت گرد تنظیموں کی مالی معاونت روکنے کے لیے ایک نیا طریقہ کار وضع کرتے ہوئے رقوم کی بیرون ملک بالخصوص مشکوک افراد کو منتقلی کی نگرانی کا نظام نافذ کیا ہے۔

’’العربیہ‘‘ کے مطابق سعودی عرب کی حکومت نے بیرون ملک رقوم کی منتقلی کی 12 سرگرمیوں پر نظر رکھنے کے لیے نئی مانیٹرنگ پالیسی نافذ کی گئی ہے تاکہ بیرون ملک رقوم کی غیر قانونی طریقے سے منتقلی اور دہشت گردوں کو رقوم کی فراہمی کا سد باب کیا جا سکے۔

سعودی عرب کی جانب سے بیرون ملک رقوم کی منتقلی کی 12 مختلف اسکیموں پر نظر رکھنے کا مقصد دہشت گردی کے مالی سوتے خشک کرنا ہے۔ سعودی عرب کی قیادت میں سرگرم عرب فوجی اتحاد بھی بیرون ملک دہشت گردی کے لیے رقوم کی فراہمی پر نظر رکھے ہوئے ہے۔

نئی فہرست کے مطابق حکومت رقوم کی منتقلی کی ایسی 12 مختلف مشکوک سرگرمیوں پر نظر رکھی جا رہی ہے جن کے ذریعے دہشت گردوں تک رقوم پہنچائی جا سکتی ہیں۔ ان میں فلاحی سرگرمیاں، قرض اور فنڈنگ، بینکنگ شعبہ، حوالہ، ڈیبٹ کارڈ، چیکوں اور غیر ملکی کرنسی کے تبادلے جیسے سرگرمیاں شامل ہیں۔