.

سویڈن معاہدے کے بعد حوثیوں‌ کے زیر حراست 6 افراد قتل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں اغواء کئے گئے شہریوں کے اقارب پر مشتمل رابطہ گروپ نے کہا ہے کہ گذشتہ ماہ دسمبر میں سویڈن کی میزبانی میں حوثی ملیشیا اور یمنی حکومت کے درمیان طے پانے والے جنگ بندی معاہدے کے بعد حوثیوں کے عقوبت خانوں میں تشدد کے نتیجے میں 6 افراد جاں بحق ہو گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق لاپتا شہریوں کے والدین کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ جنگ بندی معاہدے کے باوجود حوثیوں کے حراستی مراکز میں قیدیوں سے غیر انسانی سلوک جاری ہے اور شہریوں کی جبری گم شدگیوں کا سلسلہ بھی بند نہیں ہوسکا ہے۔ حوثیوں کی جانب سے غیرانسانی سلوک کے خلاف گرفتار اور گم شدہ شہریوں کے اقارب نے صنعاء میں انسانی حقوق کے ہائی کمیشن کے دفتر کے باہر احتجاج بھی کیا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ جنگ بندی معاہدے کے بعد حوثیوں‌نے 36 شہریوں کو اغواء کے بعد عقوبت خانوں میں ڈالا۔ حوثیوں کی نام نہاد عدالتوں میں شہریوں کا مجرمانہ اور توہین آمیز ٹرائل بھی بدستور جاری ہے۔ صنعاء کی جیلوں میں قید شہریوں کے بنیادی حقوق کی سنگین پامالیاں جاری ہیں اور قیدیوں کو تنگ اور تاریک کوٹھڑیوں میں بند کیا گیا ہے جہاں سورج کی روشنی کا بھی کوئی گذر نہیں ہوتا۔