.

سعودی عرب کا میوزیم جہاں شاہ عبدالعزیز کی بندوق بھی موجود ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے صوبے عسیر کے شمالی شہر النماص میں واقع بن یحیی میوزیم میں 18 ہزار قدیم اشیاء کے ساتھ ماضی کو یکجا کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔

میوزیم میں ایک ہی چھت کے نیچے طویل تاریخ کو سمو دیا گیا ہے۔ میوزیم کے مالک علی بن یحیی الشہری نے یہاں موجود تمام اشیاء 40 برس کی مسلسل تگ ودو کے ذریعے جمع کیں۔ انہوں نے خود کو مکمل طور پر فارغ کر کے تاریخی اہمیت کی حامل اشیاء کے ذریعے اپنے میوزیم کو ترقی دینے کے واسطے وقف کر رکھا ہے۔

الشہری نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ان کے میوزیم میں ایک پرانی بندوق بھی ہے مملکت سعودی عرب کے بانی شاہ عبدالعزیز بن عبد الرحمن آل سعود کے زیر استعمال رہی۔ علاوزہ ازیں میوزیم میں بہت سے گھریلو اشیاء ، تلواریں اور خنجر بھی موجود ہیں جن کی قیمت پانچ ہزار سے ایک لاکھ ریال تک ہے۔

الشہری نے مزید بتایا کہ تاریخی اہمیت کی حامل قدیم دستاویزات، آثاریاتی نوعیت کے زیورات اور بعض نادر نوعیت کی مالی کرنسیاں بھی ان کے میوزیم کی زینت ہیں۔ ان کرنسیوں میں عباسی دور کی کرنسی ، اموی دور کی کرنسی ، بازنطینی کرنسی کے علاوہ وہ بڑی کرنسی بھی شامل ہے جو سعودی حکم رانی سے قبل لوگ مملکت کے شمالی علاقے میں استعمال کرتے تھے۔