.

نیتن یاہو اسی ماہ روسی صدر سے شام میں ایران کی فوجی سرگرمی پر مذاکرات کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے کہا ہے کہ وہ اسی ماہ روسی صدر ولادی میر پوتین سے ماسکو میں ملاقات کریں گے اور ان سے شام میں ایران کی فوجی سرگرمی کے بارے میں بات چیت کریں گے۔

دونوں لیڈروں کے درمیان گذشتہ سال نومبر کے بعد یہ پہلی بالمشافہ ملاقات ہوگی ۔اس دوران میں جنوری میں اسرائیل نے شام میں متعدد فضائی حملے کیے ہیں اور یہ دعویٰ کیا ہے کہ اس کے لڑاکا طیاروں نے شام میں پاسداران انقلاب ایران کی تنصیبات کو نشانہ بنایا ہے۔

نیتن یاہو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ میں 21 فروری کو روس جاؤ ں گا ۔اس سے پہلےمیں نے پیرس میں چند ماہ قبل صدر پوتین سے بات چیت کی تھی اور پھر ان سے فون پر بھی گفتگو ہوئی ہے‘‘۔

انھوں نے اپنے دفتر میں آسٹریا کے صدر الیگزینڈر وان ڈیر بیلن سے ملاقات سے قبل کہا :’’ یہ بہت اہم معاملہ ہے کہ ہم ایران کو شام میں پاؤں پھیلانے سے روکنے کے لیے کوششیں جاری رکھیں۔ میں روسی صدر سے دیگر موضوعات کے علاوہ اس پر تبادلہ خیال کروں گا بلکہ یہ ہماری گفتگو کا مرکزی موضوع ہوگا ‘‘۔

نیتن یاہو نے 29 جنوری کو مقبوضہ بیت المقدس میں روس کے دو سینیر عہدے داروں سے شام میں فوجی روابط جاری رکھنے کے بارے میں گفتگو کی تھی تاکہ کسی قسم کے ناخوشگوار واقعے سے بچا جاسکے ۔اسرائیلی وزیراعظم کے دفتر کے ایک بیان کے مطابق روس کے شام میں سفیر الیگزینڈر لیفرنتیف اور نائب وزیر خارجہ سرگئی ویرشنین سے ملاقات میں ایران اور شام کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔