.

لولیسگارڈ کی الحدیدہ کی گذرگاہوں کا کنٹرول عالمی نگرانی میں دینے کی تجویز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں حکومت اور حوثی باغیوں کے درمیان سویڈن میں طے پائے جنگ بندی معاہدے کی نگرانی کے لیے اقوام متحدہ کے مبصرین پرمشتمل کمیٹی کےچیئرمین ڈینش جنرل مائیکل لولیسگارڈ نے تجویزدی ہے کہ الحدیدہ کی تمام گذرگاہوں کا کنٹرول بین الاقوامی نگرانی میں دیا جائے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق جنرل مائیکل لولیسگارڈ نے ہفتے کے روز اپنی تجاویز امن روڈ میپ کی تفصیلات یمن کے آرمی چیف جنرل عبداللہ النخعی کے سامنے پیش کیں۔ اس موقع پر الحدیدہ میں نگرانی کے لیے قائم کردہ حکومتی ٹیم بھی موجود تھی۔

جنرل لولیسگارڈ کا کہنا ہے کہ ان کا پلان الحدیدہ کی گذرگاہوں کو محفوظ بنانے، انسانی امداد کی متاثرین تک رسائی کو یقینی بنانے اور شہر میں امن وامان کی بحالی میں مدد گار ثابت ہوگا۔ان کا کہنا تھا کہ وہ اپنی تجاویز یمن کے دونوں متحارب فریقین کے سامنے رکھیں گے۔ الحدیدہ کی تمام گذرگاہوں کو عالمی نگرانی میں دینے سے شہر میں انسانی سرگرمیوں کی بہتری کی راہ ہموار ہوگی۔

درایں اثناء یمن کے آرمی چیف نے کہا کہ وہ سویڈن میں طے پائے جنگ بندی معاہدے کی تمام شرائط پر ان کی روح کے مطابق عمل کرنے کے خواہاں ہیں۔ اس وقت جنگ سے متاثرہ شہریوں تک امداد کی براہ راست فراہمی کی اشد ضرورت ہے۔ اس میں کسی قسم کی لاپرواہی اور غفلت کی گنجائش نہیں۔ انہوں‌نے کہا کہ سویڈن میں طے پائے معاہدے میں الحدیدہ سے حوثی ملیشیا کی بے دخلی اور تمام حکومتی تنصیبات کا کنٹرول آئینی حکومت کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

آرمی چیف نے حوثیوں کی ہٹ دھرمی کی طرف توجہ دلاتےہوئے کہا کہ حوثی باغی جنگ بندی معاہدے کی مسلسل خلاف ورزیاں کررہے یہ ثابت کررہےہیں کہ وہ امن مساعی میں مخلص نہیں۔