.

سعودی عرب میں نجی سیکٹر کی سب سے بڑی بندرگاہ کا افتتاح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے پیر کے روز جدہ میں کنگ عبداللہ اکنامک پورٹ کا افتتاح کر دیا۔ اس بندرگاہ کا رقبہ 1.7 کروڑ مربع میٹر اور گہرائی 18 میٹر ہے۔

بندرگاہ کے چیف ایگزیکٹو ریان قطب نے العربیہ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں بتایا کہ یہ نئی بندرگاہ جدید طرز کے سب سے بڑے کارگو جہازوں کا استقبال کرنے کی قدرت رکھتی ہے۔ یہ سعودی عرب میں پہلی بندرگاہ ہے جس کی ملکیت اور انتظامی امور نجی سیکٹر کے پاس ہیں۔

ریان کے مطابق کنگ عبداللہ پورٹ مشرق وسطی میں نجی سیکٹر کی جانب سے مکمل کیے جانے والے انفرا اسٹرکچر کے سب سے بڑے منصوبوں میں سے شمار ہوتی ہے۔ اس میں سالانہ 34 لاکھ کنٹینروں کو ہینڈل کرنے کی گنجائش ہے۔

چیف ایگزیکٹو نے بتایا کہ منصوبے کی تکمیل پر یہ دنیا کی 10 بڑی بندرگاہوں میں سے ایک ہو گی جہاں 2 کروڑ کنٹینروں ، 1.5 ٹن بَلک کارگو اور 15 لاکھ گاڑیوں کی گنجائش ہو گی۔ انہوں نے واضح کیا کہ نئی بندرگاہ اور اس کے مقاصد سعودی ویژن 2030 پروگرام کے ضمن میں ہیں۔

ریان قطب کے مطابق کنگ عبداللہ پورٹ کا مقصد اسے صرف سعودی عرب نہیں بلکہ دنیا کے لے لوجسٹک پلیٹ فارم بنانا ہے۔ اسی واسطے گزشتہ برسوں کے دوران اس بندرگاہ نے تیزی کے ساتھ نمو کا مشاہدہ کیا اور توقع ہے کہ یہ بھرپور ترقی آئندہ برسوں میں بھی جاری رہے گی۔

قطب نے بتایا کہ بندرگاہ کی تعمیر کے لیے کھدائی کا کام 2010 میں شروع ہوا تھا اور یہاں آپریشنز کا سلسلہ 2014 سے ہوا۔ رواں برس یہ سعودی عرب میں کنٹینروں کے لیے دوسری سب سے بڑی بندرگاہ بن چکی ہے۔