ایرانی رجیم خطے کو عدم استحکام سے دوچارکرنے میں سرگرم ہے: خالد بن سلمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا میں متعین سعودی عرب کے سفیر شہزادہ خالد بن سلمان نے کہا ہے کہ ایرانی رجیم مشرق وسطیٰ کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشوں میں مسلسل سرگرم ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ 'وارسا امن کانفرنس' میں سعودی عرب سمیت 70 ممالک کے مندوبین شرکت کررہے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی سفیر نے ایک بیان میں کہا کہ 'وارسا' کانفرنس میں سعودی عرب شرکت کرکے خطے کی سلامتی کو درپیش چیلنجز کے حوالے سے اپنے موقف سے آگاہ کرے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران پوری دنیا بالخصوص مشرق وسطیٰ کی امن وسلامتی کے لیے‌خطرہ ہے اور وہ دہشت گردی کی کھلے عام سرپرستی کررہا ہے۔

شہزادہ خالد بن سلمان نے کہا کہ ایرانی نظام خطے کو عدم استحکام سےدوچار کرنے کی سازشوں میں مسلسل سرگرم ہے۔ سعودی عرب اور یمن میں شہریوں پر ہونے والےحملوں میں میزائل ایران کی طرف سے مہیا کیے جاتے ہیں۔

خیال رہے کہ وارسا کانفرنس کل بدھ کو پولینڈ کے دارالحکومت وارسا میں شروع ہوئی۔ اس کانفرنس میں کئی بڑے ممالک شرکت کررہےہیں۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ وارسا کانفرنس کے انعقاد کا مقصد ایران پر دباو ڈالنے مشرق وسطیٰ کے ممالک اور یورپی ملکوں کی طرف سے حمایت حاصل کرنا اور ایران کے تخریبی کردار کی روک تھام کے لیے اقدامات کرنا ہے۔

قبل ازیں پولینڈ کے وزیر خارجہ نے ایک بیان میں کہا تھا کہ وارسا کانفرنس میں 60 ممالک کے مندوبین شرکت کریں گے۔ کانفرنس کا دوسرا دور آج 14 فروری کو ہوگا۔

ادھر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہا ہے کہ وارسا کانفرنس مشرق وسطیٰ کے خطے کو درپیش خطرات کو کم کرنے میں مدد فراہم کرے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں