اقوام متحدہ امدادی سامان کی لوٹ مار کرنے والوں کا نام لے : یمنی حکومت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یمن کی حکومت نے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کے سکریٹری برائے امورِ انسانی حقوق اور ہنگامی امداد کے امور کے رابطہ کار مارک لوکک کی اُس بریفنگ پر تنقید کی ہے جو انہوں نے یمن میں انسانی صورت حال کے حوالے سے سلامتی کونسل میں پیش کی۔

یمن میں مقامی انتظامیہ کے وزیر اور امداد کی سپریم کمیٹی کے سربراہ عبدالرقیب فتح نے اس امر کی مذمت کی ہے کہ مارک لوکک نے امدادی کارروائیوں کے خلاف باغی حوثی ملیشیا کی خلاف ورزیوں کا ذکر نہیں کیا۔ عبدالرقیب کے مطابق اقوام متحدہ کے مبصرین کی الحدیدہ میں آمد کے بعد حوثیوں نے 100 سے زیادہ امدادی ٹرکوں کو روک دیا۔ ان میں 5 ٹرک ہیضہ اور ملیریا کی ادویات لے کر آئے تھے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ حوثیوں نے عالمی ادارہ خوراک کے ایک وفد کو تعز صوبے کے مشرقی داخلی راستے پر یرغمال بنا لیا اور انہیں انسانی صورت حال سے آگاہی حاصل کرنے کے لیے صوبے میں داخلے سے روک دیا۔ علاوہ ازیں باغیوں نے اقوام متحدہ کی تنظیموں کے گوداموں کو چار مرتبہ مارٹر گولوں کا نشانہ بنایا۔

یمنی وزیر نے اقوام متحدہ کے عہدے داران سے مطالبہ کیا ہے کہ اس فریق کا اعلانیہ تعین کریں جو انسانی کارروائیوں میں رکاوٹ ڈال رہا ہے اور امدادی سامان کی لوٹ مار میں مصروف ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں