.

اسرائیلی پولیس کے ہاتھوں اوقاف کونسل کے سربراہ کی گرفتاری اور رہائی

کریک ڈاون میں 60 فلسطینی شہری پابند سلاسل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی پولیس نے گذشتہ روز مقبوضہ بیت المقدس میں ایک کارروائی کے دوران اردن کی قائم کردہ 'سپریم اوقاف کونسل' کے سربراہ الشیخ عبدالعظیم سلھب اور ان کے نائب ناجح بکیرات کو حراست میں لینے کے چند گھنٹے بعد رہا کردیا۔ دونوں رہ نمائوں‌کی گرفتاری القدس بالخصوص مسجد اقصیٰ میں کشیدگی کے بعد عمل میں لائی گئی تھی۔ اطلاعات کے مطابق دو روز میں اسرائیلی فوج نے بیت المقدس سے 60 فلسطینیوں کو حراست میں لے لیا ہے۔

اسرائیلی پولیس نے اور ناجح بکیرات کو حراست میں لینے کے بعد رہا کردیا۔ رہائی کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے اردن کی طرف سے حرم قدسی کے لیے قائم سپریم اوقاف کونسل کے سربراہ نے کہا کہ گرفتاریاں ہمارا راستہ نہیں روک سکتیں، مسجد اقصیٰ اور اس سے ملحقہ تمام مقدس مقامات کا دفاع ہمارا حق ہے۔

فلسطینی خبر رساں ادارے 'وفا' کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیلی پولیس نے گذشتہ مسجد اقصیٰ‌ میں ایک کارروائی کے دوران سپریم اوقاف کونسل کے سربراہ الشیخ عبدالعظیم سلھب اوران کے نائب الشیخ ناجح بکیرات کو حراست میں لے کرکئی گھنٹے حبس بے جا میں رکھا۔

ادھراردن کی وزارت اوقاف اورمذہبی اور فلسطینی اتھارٹی نے اسرائیلی پولیس کے ہاتھوں اہم شخصیات کی گرفتاریوں کی شدید مذمت کی ہے۔ فلسطینی وزارت اوقاف کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ القدس میں سپریم اوقاف کونسل کے سربراہ اور دیگر عہدیداروں کی گرفتاری خطرناک پیش رفت ہے اور اس طرح کی کارروائیوں کے نتیجے میں القدس اوقاف کا قبلہ اول کے دفاع کے حوالے سے کردار متاثر ہوگا۔

ادھر اسرائیلی پولیس کا کہنا ہے کہ اس نے مسجد اقصیٰ میں کشیدگی پر قابوپانے کے لیے 60 فلسطینیوں کو حراست میں لیا تھا جن میں سے بعض کو رہا کردیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ مسجد اقصیٰ گذشتہ کچھ عرصے سے کشیدگی کی لپیٹ میں ہے۔ گذشتہ ہفتے اسرائیلی فوج نے مسجد اقصیٰ کے 'باب رحمت' میں گھس کر وہاں پر نماز اور عبادت میں مصروف فلسطینیوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جس کے بعد فلسطین میں سخت غم وغصے کی فضاء پائی جا رہی ہے۔