.

مسئلے کی بنیاد کی جانب لوٹے بغیر جامع حل ممکن نہیں: یمنی صدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی صدر عبدر ربہ منصور ہادی کا کہنا ہے کہ یمن کی صورت حال کا جامع حل مسئلے کی بنیاد کی جانب لوٹے بغیر کامیاب نہیں ہو سکتا۔

انہوں نے اپنی ٹویٹ میں زور دیا کہ "یمن کے بحران کا کوئی بھی جامع حل نتائج پر موقوف نہیں بلکہ مسئلے کی بنیاد اور اس کی حقیقی وجوہات کی جانب لوٹنے سے ہی ممکن ہو سکے گا۔ اس کے سوا کوئی چارہ کار نہیں کہ یہ حل خلیجی منصوبے، قومی مکالمہ کانفرنس کے نتائج اور اقوام متحدہ کی متعلقہ قرار دادوں پر مرکوز ہونا چاہیے ، ان میں قرار داد نمبر 2216 سرفہرست ہے"۔

دوسری جانب الحدیدہ میں نئی صف بندی سے متعلق اجلاس کے دوران آئینی حکومت کے وفد نے بین الاقوامی مبصرین کی ٹیم کے سربراہ کو حوثیوں کی جانب سے فائر بندی کے معاہدے کی خلاف ورزیوں کے بارے میں آگاہ کیا۔

متحارب فریقین کے درمیان گزشتہ برس دسمبر میں طے پانے والے اس معاہدے کو حوثی ملیشیا کی جانب سے رکاوٹوں کا سامنا ہے جس نے ابھی تک الحدیدہ ، الصلیف اور راس عیسی کی بندرگاہوں سے انخلا پر عمل درامد نہیں کیا۔ اسی بنا پر یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی مارٹن گریفتھس نے حوثی قیادت سے ملاقات کے لیے اپنے صنعاء کے دوروں اور سویڈن معاہدے کو بچانے کی کوشش کو بڑھا دیا ہے۔