.

غزہ میں حماس نے ایرانی حمایت یافتہ 'تحریک صابرین' کی قیادت گرفتار کرلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی کی حکمراں تنظیم'حماس' نے ایران کی وفادار سمجھی جانے والی 'تحریک الصابرین' کے سیکرٹری جنرل ھشام سالم اور چار دیگر رہ نمائوں کو حراست میں لے لیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ھشام سالم کے اہل خانہ کی طرف سے بتایا گیا کہ حماس حکومت کے انٹیلی جنس حکام نے الصابرین تحریک کے رنمائوں کے گھروں پر چھاپے مارے۔ تلاشی کے دوران توڑپھوڑ کے بعد ان کے لیپ ٹاپ اور موبائل قبضے میں لینے کے ساتھ ساتھ ھشام سالم اور بعض دوسرے رہ نمائوں کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

غزہ میں حماس کی طرف سے ان گرفتاریوں کی وجہ معلوم نہیں ہوسکی۔ تاہم غزہ میں باوثوق ذرائع کا کہنا ہے کہ حماس کے سیاسی شعبے کے دفتر کی طرف سے تحریک صابرین کوغیر مسلح‌کرنے کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ گرفتار کیے گئے الصابرین تحریک کے رہ نمائوں سے ان کے اسلحہ کے ذخائر اور سرنگوں کے بارے میں پوچھ تاچھ کی جا رہی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ گرفتاریاں ایک ایسے وقت میں عمل میں لائی گئی ہیں جب بعض عرب ممالک جن میں مصر اور قطر شامل ہیں نے حماس پر سخت دبائو ڈالا ہوا ہے۔ یہ دبائو ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب حال ہی میں شامی صدر بشارالاسد نےایران کا دورہ کیا اور حماس کی مالی مدد میں کمی کی بات کی گئی تھی۔

امریکا نے گذشتہ برس"الصابری" وک دہشت گرد تنظیم قرار دیا تھا۔ واشنگٹن حماس کے سیاسی بیورو کے سربراہ اسماعیل ھنیہ کو بھی دہشت گرد قرار دے کر انہیں بلیک لسٹ کرچکا ہے۔