.

حوثی ملیشیا نے انتقامی کارروائی کے تحت گائوں کے کئی مکان دھماکےسے اڑا دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں ایران نواز حوثی ملیشیا نے انتقامی کارروائی کرتے ہوئے 'کشر' ڈاریکٹوریٹ کے نواحی علاقے النامرہ میں شہریوں‌کے متعدد مکانات بارود نصب کرکے اڑا دیئے، جس کے نتیجے میں مقامی شہری گھروں سے محروم ہوگئے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حوثیوں‌ کی طرف سے یہ انتقامی کارروائی حجور قبائل کے ساتھ جاری لڑائی کےدوران مسلسل پسپائی اور شکست کے رد عمل میں کی گئی ہے۔

حجور قبائلی ذرائع کا کہنا ہے کہ حوثی ملیشیا کے جنگجوئوں کی بڑی تعداد نے وشحۃ اور قارۃ ڈاریکٹوریٹ سے ملحقہ علاقے کشر اور دیگر قصبوں میں شہریوں کےگھروں پر چھاپے مارے اور انہیں گھر خالی کرنے پر مجبور کرتے ہوئے ان کے گھروں پر قبضہ کرلیا۔ بعد ازاں کئی مکانات کو بارود نصب کرکے دھماکوں سے اڑا دیا گیا۔

یمن کی وزارت برائے انسانی حقوق نے حوثیوں کی طرف سے بے گناہ شہریوں‌کے گھروں کو دھماکوںسے اڑانے کو وحشیانہ اور غیرانسانی فعل قراردیا۔

وزارت برائے انسانی حقوق کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حجۃ گورنری کے نواحی علاقے کشر میں حوثیوں نے بنی جبھان اور بنی الجشیبی قبیلوں کے 13 مکانات دھماکوں اڑا دیے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ شہریوں کے مکانات دھماکوں سے تباہ کرنا شہریوں کو اجتماعی سزا دینے کے مترادف ہے۔ یمنی حکومت کا کہنا ہے کہ ایرانی حمایت یافتہ حوثی شدت پسند اپنے مخالفین کے خلاف بدترین انتقامی حربوں کا استعمال کرکے ملک میں فرقہ واریت اور دہشت گردی کو فروغ دے رہے ہیں۔ وہ خواتیں اور بچوں کی رعایت کیے بغیر مخالفین کے خلاف سیاسی انتقامی کارروائیوں میں سرگرم عمل ہیں۔