ریاست کے اندر ریاست بنانے والے اصل کرپٹ ہیں: السنیورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان کے سابق وزیراعظم فواد السنیورہ نے حزب اللہ ملیشیا کی طرف سے تنقید کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ اصل کرپشن ریاست کے اندر ریاست کا قیام ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ '11 ارب ڈالر کی کرپشن کی کہانی چائے کی پیالی میں طوفان برپا کرنے کی کوشش کے مترادف ہے'۔

سابق لبنانی وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ مجھ پر کرپشن کا الزام عاید کرنے والے ملک کو درپیش اصل مسائل سے توجہ ہٹانے اور ملک میں حقیقی اصلاحات کی راہ روکنے کے مرتکب ہیں۔

السنیورہ نے حزب اللہ کی طرف سے ان کی حکومت پر کرپشن کے الزامات کو سختی سے رد کر دیا اور کہا کہ اصل کرپشن سیاسی کرپشن ہے اور اصل کرپٹ وہ لوگ ہیں جو ریاست کے اندر ریاست قائم کرتے ہیں، دستوری استحقاق کو معطل کرتے اور نفاذ قانون کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کرتے ہیں۔

جمعہ کو بیروت میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ سنہ 2006ء میں انہوں نے ایک نیا مسودہ قانون تیار کیا جس میں تمام مالیاتی امور اور مانیٹرنگ اداروں کو ریاست کے ماتحت لانے کی کوشش کی گئی۔ سنہ 1979ء کے بعد ریاست کے تمام اداروں کو ایک مانیٹرنگ سسٹم میں لانے کی پہلی کوشش تھی۔ انہوں‌ نے یہ مسودہ قانون پارلیمنٹ کو بھیجا۔ آئین کے ذریعے تمام اداروں کو ریاست کے ماتحت لانے کا یہ پرامن طریقہ تھا مگر ابھی تھی تک یہ التواء کا شکار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں