.

شام :آخری محاذ پر شکست سے دوچار داعش کے کرد ملیشیا کے خلاف خودکش کار بم حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے مشرقی علاقے میں شکست سے دوچار سخت گیر جنگجو گروپ داعش نے اپنے آخری حربے کے طور پر امریکا کی حمایت یافتہ شامی جمہوری فورسز ( ایس ڈی ایف) کے خلاف کاربم حملے اور خودکش حملے شروع کردیے ہیں۔

مشرقی صوبے دیر الزور میں واقع گاؤں الباغوز ہی اب داعش کے کنٹرول میں رہ گیا ہے اور وہاں اس وقت داعش اور ایس ڈی ایف کے درمیان شدید لڑائی جاری ہے۔ایس ڈی ایف کے جنگجوؤں نے گذشتہ 18 گھنٹے کے دوران میں بڑی سست روی سے پیش قدمی کی ہے کیونکہ داعش نے وہاں جگہ جگہ بارودی سرنگیں بچھا رکھی تھیں۔داعش کے جنگجو ؤں نے اس گاؤں میں زیر زمین سرنگیں بنا رکھی ہیں اور وہ حملوں کے بعد وہاں چھپ جاتے ہیں۔

امریکا کی حمایت یافتہ کرد اور عرب ملیشیاؤں پر مشتمل ایس ڈی ایف کو آج اتوار کی دوپہر تک داعش کے خلاف فیصلہ کن مہم مکمل ہونے کی توقع تھی لیکن امریکا کی قیادت میں بین الاقوامی اتحاد کے ترجمان کرنل سیان ریان کا کہنا ہے کہ ایس ڈی ایف کی پیش قدمی سست روی کا شکار ہوچکی ہے کیوں کہ داعش کے خودکش بمبار حملے کررہے ہیں یا کار بم دھماکے کررہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’’ داعش کے جنگجوؤں نے شہریوں کو یرغمال بنا رکھا ہے اور انھوں نے زیر زمین سرنگیں بارود سے بھر دی ہیں‘‘۔

ایس ڈی ایف نے قبل ازیں یہ کہا تھا کہ الباغوز میں داعش کے سیکڑوں جنگجو موجود ہوسکتے ہیں اور ان میں زیادہ تر غیر ملکی ہیں ۔امریکی اتحاد نے انھیں انتہائی سخت جان جنگجو قرار دیا ہے ۔تاہم کرنل سیان ریان کا کہنا ہے کہ داعش کے یہ جنگجو زیر زمین چھپے ہوئے ہیں،اس لیے ان کی حقیقی تعداد کا اندازہ لگانا مشکل ہے۔

امریکی اتحادیوں کے لڑاکا طیاروں نے بھی آج دوپہر باغوز پر بمباری کی ہے اور محاذ جنگ سے تین کلومیٹر کے فاصلے سے توپ خانے سے داعش کے ٹھکانوں پر گولہ باری کی گئی ہے۔اس کے بعد گاؤں سے سیاہ دھویں کے بادل اٹھتے ہوئے دیکھے گئے تھے۔

ایس ڈی ایف کے ایک کمانڈر نے برطانوی خبررساں ایجنسی رائیٹرز کو بتایا ہے کہ داعش نے ہفتے کی شب پیش قدمی کرنے والے جنگجوؤں کی جانب بارود سے لدی گاڑیاں بھیج دی تھیں ۔ان میں سے دو کو فضائی حملوں میں اڑا دیا گیا ہے اور ایس ڈی ایف نے تیسری گاڑی پر فائرنگ کی ہے جس سے وہ دھماکے سے پھٹ گئی ۔

داعش نے بھی جوابی گولہ باری جاری رکھی ہوئی ہے جس سے ایس ڈی ایف میں شامل کرد ملیشیا وائی پی جی کا ایک اہم کمانڈر سنجار شمار گولہ لگنے سے زخمی ہوگیا ہے۔ داعش کا چلایا گیا ایک گولہ ان کی گاڑی کو آکر لگا تھا۔ واضح رہے کہ انھوں نے ایس ڈی ایف اتحاد کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا تھا۔