.

قطری میڈیا سوڈان کے حوالے سے جھوٹی پروپیگنڈا مہم میں مصروف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کا میڈیا سوڈان کے بحران میں جھوٹا پروپیگنڈا کرنے میں مصروف ہے۔ اس مقصد کے لیے یہ افواہ پھیلائی گئی کہ سوڈانی انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر صلاح عبداللہ نے اسرائیلی خفیہ ایجنسی موساد، مصر ، سعودی عرب اور امارات کے عہدے داران سے ملاقات کی تا کہ صدر عمر البشیر کے جاں نشیں کے طور پر اقتدار سنبھالنے کے لیے ان ممالک کی موافقت حاصل کر سکیں۔

قطر کے نیوز چینل "الجزيرہ" نے یہ جھوٹی خبر "Middle East Eye" کے حوالے سے نشر کی تا کہ یہ اشارہ دیا جا سکے کہ یہ ایک مصدقہ مغربی ذریعہ ہے۔ تاہم درحقیقت یہ قطر سے فنڈنگ حاصل کرنے والا میڈیا ادارہ ہے اور قطری میڈیا کے دائرے میں مصروف عمل رہتا ہے۔

سوڈانی انٹیلی جنس ادارے نے یکم مارچ کو ایک بیان میں الجزیرہ نیوز چینل کی جانب سے نشر کی گئی اس خبر کو جھوٹا قرار دیا جس میں کہا گیا تھا کہ سوڈان کے سکیورٹی ادارے اور نیشنل انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر جنرل نے گزشتہ ماہ میونخ میں منعقدہ سکیورٹی کانفرنس کے موقع پر اسرائیلی انٹیلی جنس موساد کے سربراہ سے ملاقات کی۔

بیان کے مطابق یہ خبر مکمل طور پر بے بنیاد ہے۔ سوڈانی انٹیلی جنس نے الجزیرہ چینل سے مطالبہ کیا کہ وہ پیشہ وارانہ رجحان کا مظاہرہ کرتے ہوئے خبر کو نشر کرنے سے قبل اس کی تصدیق کیا کرے جب کہ چینل یہ جانتا ہے کہ سوڈانی حکومت اور عوام مسئلہ فلسطین کے حوالے سے غاصب صہیونی وجود کے لیے راسخ موقف کے حامل ہیں۔

سوڈانی انٹیلی جنس نے قطری ذرائع ابلاغ کے جھوٹے پروپیگنڈے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اس کا مقصد برادر ممالک کو اختلافات اور تنازع کی لپیٹ میں لانا ہے۔ انٹیلی جنس کے مطابق سوڈان کے خلاف اس طرح کی افواہوں کا سلسلہ ایک عرصے سے جاری ہے۔ اس کا مقصد سوڈان کو اسرائیلیوں کے ساتھ تعلق استوار کرنے کے لیے کھینچ کر لانا ہے۔