.

یمن : سیکڑوں قبائلی افراد حوثی ملیشیا سے منحرف ہو کر "حجور" قبائل سے جا ملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے صوبے حجہ میں زمینی ذرائع نے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے ہفتے کی شب المنصورہ کے تزویراتی قلعے کو نشانہ بنانے کے لیے ایک وسیع حملہ کیا جسے حجور قبائل نے پسپا کر دیا۔ حجور ضلع کے شمال مشرق میں ہونے والی کارروائی کے دوران باغیوں کے جانی نقصان میں درجنوں ارکان ہلاک اور زخمی ہو گئے۔

حوثیوں کے خلاف لڑائی میں حجور قبائل کی مدد کے لیے دیگر یمنی قبائل کے افراد کی ایک بڑی تعداد شامل ہو گئی ہے۔ علاوہ ازیں سیکڑوں قبائلی افراد جو پہلے حوثی ملیشیا کی صفوں میں شامل ہو کر لڑ رہے تھے ،،، وہ منحرف ہو کر حجور قبائل کے ساتھ جا ملے ہیں۔ واضح رہے کہ یمنی فوج کشر ضلعے کا محاصرہ ختم کرانے کے لیے جلد ایک عسکری آپریشن کے واسطے تیاری کر رہی ہے۔

کشر ضلع کے جنوب میں حجور قبائل کے ساتھ جھڑپوں میں حوثی کمانڈر کرنل نبیل عبداللہ صالح القعود درجنوں حوثی باغیوں کے ساتھ مارا گیا۔ صنعاء میں ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ القعود حوثی ملیشیا کے سرغنے عبدالملک الحوثی کے مقرب کمانڈروں میں سے تھا۔

ادھر ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ یمنی فوج کی نئی کمک حجہ صوبے میں مغربی ساحل پر پہنچ کر ففتھ ملٹری زون میں شامل ہو چکی ہے۔ اس پیش رفت کا مقصد حجور قبائل کے گرد جاری محاصرے کو توڑنے کی کارروائی میں شرکت ہے۔ واضح رہے کہ کشر ضلع یمن کے تین صوبوں حجہ، عمران اور صعدہ کے سنگم پر واقع ہے۔

یاد رہے کہ حجور قبائل کی مدد کے لیے یمن کی سرکاری فوج کے 6 بریگیڈز کو حرکت میں لانے کی ہدایات جاری کی جا چکی ہیں۔

یمنی وزارت دفاع کے مطابق کشر ضلع میں عرب اتحادی طیاروں کے حملوں میں 30 سے زیادہ حوثی ہلاک ہو گئے۔ یہ کارروائی اس وقت کی گئی جب حوثی ملیشیا کے عناصر گولہ بارود سے لدی ایک گاڑی سے دھماکا خیز مواد وصول کر رہے تھے۔