مغرب سے جوہری معاہدے نے ہمیں قید کر دیا: ایرانی عالم دین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے قدامت پسندوں اور اصلاح پسندوں کے درمیان 2015ء میں مغربی ملکوں کے ساتھ طے پائے جوہری سمجھوتے اور تجارتی و مالیاتی قوانین کے حوالے سے اختلافات مسلسل شدت اختیار کرتے جا رہے ہیں۔

قدامت پسندوں کی جانب سے صدر حسن روحانی اور وزیر خارجہ محمد جواد ظریف کو سخت تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ اسی ضمن میں تہران کے ایک سرکردہ عالم دین اور تہران کے جمعہ کے قائم مقام خطیب علامہ آیت اللہ کاظم صدیقی نے مغربی ملکوں کے ساتھ طے پائے سمجھوتے پر سخت تنقید کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اس معاہدے نے ایرانی قوم کو 'قید' کر کے رکھ دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق جمعہ کے اجتماع سے خطاب میں ایرانی عالم دین نے کہا کہ مغرب سے معاہدہ کرنے کا ایرانی قوم کو کیا فائدہ ہوا۔ ہم اب بھی معاشی طور پر آزاد نہیں جب کہ دشمن کو ہر طرح کی آزادی حاصل ہے۔

ادھر ایک دوسرے عالم دین اور گارڈین کونسل کے رکن حجۃ الاسلام غلام رضا مصباحی نے ایران کے ساتھ تجارتی لین دین کے حوالے سے یورپی ممالک کی طرف سے شرائط پر سخت مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یورپی ممالک کو معلوم ہونا چاہیے کہ وہ ہمیں دھوکہ نہیں دے سکتے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران اور یورپ میں تجارتی لین دین کا میکنزم 'انسٹکس' اور اس کے بدلے میں ہماری حکومت کی طرف سے عالمی مالیاتی گروپ FAFT تشکیل دینا ایک دھوکہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جوہری سمجھوتے سے ایران کے نکل جانے کےبعد یورپپی ممالک نے وعدہ کیا کہ وہ ایران کو 12 تجارتی سہولیات دیں گے مگر اس حوالے سے وہ ابھی تک کوئی عملی قدم نہیں اٹھا سکے ہیں۔ ان میں سے کسی ایک نکتے پر بھی عمل درآمد نہیں کیا گیا۔

ملک میں جاری کرپشن کے حوالے سے بات کرتے ہوئے علامہ مصباحی صدیقی کا کہنا تھا کہ ایران میں بد انتظامی اور امانت میں خیانت معیشت کی تباہی کا ایک اہم سبب ہے۔ بدعنوانی کے باعث عوام غریب ہو چکے ہیں۔ ان کے پاس گوشت خرید کرنے اور بچوں کو مناسب خوراک دینے کے لیے پیسے نہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں