سولہ سالہ فلسطینی شہیدہ ایک ماہ بعد سپرد خاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج کی جانب سے ریاستی دہشت گردی کے دوران شہید کی گئی 16 سال فلسطینی بچی سماح زھیر مبارک کا جسد خاکی گذشتہ روز رام اللہ میں اس کے ورثاء کے حوالے کیا گیا، جس کے بعد اسے آبائی علاقے میں سپرد خاک کریا گیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اسرائیلی فوج نے شہیدہ کا سماح مبارک کا جسد خاکی ایک ماہ سے زاید عرصے تک قبضے میں رکھا اور پوست مارٹم کی آڑ میں اس کا جسد خاکی کی چیر پھاڑ کی گئی۔

سولہ سالہ شہیدہ سماح زھیر مبارک کا جسد خاکی اس کی شہادت کے 36 دن بعد مغربی رام اللہ میں بیتونیا کے مقام پر اس کے خاندان کے حوالے کیا گیا۔

سماح زھیر مبارک کو اسرائیلی فوج نے 30 جنوری کو مشرقی بیت المقدس میں الزعیم چوکی کے قریب گولیاں مار کر شہید کردیا تھا۔ صہیونی فوج نے دعویٰ کیا تھا کہ سماح نے فوجیوں پر چاقو سے حملے کی کوشش کی تھی مگر صہیونی فوج اپنا یہ دعویٰ ثابت نہیں کرسکی۔

انسانی حقوق کے اداروں کے مطابق صہیونی فوج نے 2015ء کے بعد سے 39فلسطینیوں کے جسد خاکی قبضے میں لے رکھے ہیں۔ ان میں دو فلسطینی نوجوانوں کے جسد خاکی گذشتہ ہفتے شہید کرنے کےبعد قبضے میں لیے گئے۔اسرائیلی فوج نے ان پر فدائی حملے کا الزام عاید کیا ہے جبکہ شہید فلسطینیوں کے والدین نے صہیونی فوج کا دعویٰ مسترد کردیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں