چاررکنی عرب اتحاد دہشت گردی کی فنڈنگ روکنے میں کامیاب: مصری افتاء

بٹکوین میں لین دین اور خریدو فروخت غیر شرعی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے دارالافتاء کی طرف سے جاری ایک بیان میں دہشت گرد تنظیموں کے مالی سوتے خشک کرنے لیے چار عرب ممالک کے اتحاد کی مساعی کو کامیاب قرار دیا ہے۔ مصری دارالافتاء کا کہنا ہے کہ مصر، سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور بحرین پر مشتمل چار رکنی عرب اتحاد نے دہشت گرد تنظیموں کے بنیادی ارکان کو منہدم کرنے اور ان کی فنڈنگ کی روک تھام کے لیے اہم سنگ میل طے کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ چار رکنی عرب اتحاد نے دہشت گردی کے خلاف جنگ، دہشت گردوں کے مالی سوتے خشک کرنے، دہشت گردوں کے مالی معاونت کاروں کا سراغ لگانے اور انتہا پسند گروپوں کو نکیل ڈالنے میں غیرمعمولی کامیابی حاصل کی ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ عرب ممالک کے اتحاد نے دہشت گردوں کی فنڈنگ روکنے کی موثر کارروائی کرکے انتہا پسندوں کو اپنی حکمت عملی بدلنے پر مجبور کیا۔ دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوث تنظیمیں ڈیجیٹل کرنسیوں اور بٹکوین کے ذریعے اپنی مالی کمی دور کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔

مصری دارالافتاء کاکہناہے کہ داعش، القاعدہ، اخوان المسلمون، اخوان سے فکری اور نظریاتی طورپر مربوط دیگر تحریکوں کو شدید مالی مشکلات کا سامنا ہے۔ ان تنظیموں کے مالی معاونت کاروں کو بھی نکیل ڈالی گئی دہشت گردوں کی مالی مدد کرنے والی تنظیموں، اداروں اور شخصیات کے خلاف موثر کارروائی کی گئی۔ عرب ممالک کی مساعی سے دہشت گردوں کو خفیہ ذرائع سے رقوم مہیا کرنا اب مشکل ہوچکا ہے۔

ادھر مصر کے مفتی اعظم کے مشیر ابراہیم نجم نے کہا کہ مصرکی افتاء کونسل نے بٹکوین اور دیگر ڈیجیٹل کرنسیوں میں لین دین کو غیرشرعی قرار دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بٹکوین اور اس طرح کی دیگر کرنسیوں میں خریدو فروخت اسلام کے شرعی اصولوں‌کے خلاف ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں