حوثی باغیوں نے 'یواین' کمیشن کے سربراہ کو راس عیسیٰ کے دورے سے روک دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے‌حوثی باغیو‌ں نے الحدیدہ شہر میں جنگ بندی کی مانیٹرنگ کے لیے قائم کی گئی کمیٹی کے سربراہ جنرل مائیکل لولیسگارڈ کو مغربی علاقے راس عیسیٰ کی بندرگاہ کے دورے سے روک دیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ‌کے مطابق سویڈن میں حکومتی مذاکراتی کمیٹی کے رکن عسکر زعیل نے بتایا کہ حوثی ملیشیا نے اقوام متحدہ کی جنگ بندی کی نگران کمیٹی کے سربراہ کو راس عیسٰی بندرگاہ کے مطالعاتی دورے سے روک دیا۔

"ٹویٹر" پر ایک ٹویٹ میں عسکر زعیل نے لکھا کہ ڈینش جنرل مائیکل لولیسگارڈ نے راس عیسیٰ بندرگاہ جانے سے روکنے پر حوثیوں کے مرکزی لیدر محمد علی حوثی کو شکایت کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ حوثی ملیشیا نے سویڈن میں طے پائے جنگ بنی معاہدے کے باوجود الحدیدہ اور راس عیسیٰ بندرگاہوں سے اپنے جنگجو ہٹانے سے انکار کررہی ہے جس کے نتیجے میں حکومت اور باغیوں کےدرمیان طے پائے جنگ بندی معاہدے پرعمل درآمد میں مسلسل تاخیر ہو رہی ہے۔

یمن کے انسانی حقوق کے وزیر محمد عسکر نے سوموار کے روز حوثیوں پر الحدیدہ میں جنگ بندی معاہدے کے نفاذ میں رکاوٹیں ڈالنے کا الزام عاید کیا۔ انہوں‌نے کہا کہ سویڈن میں طے پائے جنگ بندی معاہدے کو تین مگاہ گذر گئے ہیں مگر اس کے باوجود اس پر عمل درآمدنہیں کیا جا سکا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ 18 دسمبر 2018ء سے 11 مارچ 2018ء تک حوثیوں نے جنگ بندی معاہدے کی 1934 خلاف ورزیاں کی جن میں 123 شہری جاں‌بحق اور 627 زخمی ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں