.

یمن: صنعاء میں حوثیوں کے کیمپوں پر اتحادی طیاروں کے حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت کو سپورٹ کرنے والے عرب اتحاد کے لڑاکا طیاروں نے ہفتے کو علی الصبح صنعاء میں حوثیوں کے زیر کنٹرول متعدد ٹھکانوں کو بم باری کا نشانہ بنایا۔

عینی شاہدین کے مطابق اتحادی طیاروں نے الدیلمی کے فضائی اڈے پر تین، بیت عذران پر دو اور الاستقبال کیمپ پر ایک حملہ کیا۔ انہوں نے تصدیق کی کہ طیاروں کی اڑان کا سلسلہ جاری ہے۔

یہ فضائی کارروائی حوثیوں کے اس اعلان کے چند گھنٹے بعد سامنے آئی جس میں حوثیوں کے میڈیا نے دعوی کیا تھا کہ صنعاء کے ایک علاقے میں اتحادی فوج کا ایک ڈرون جاسوس طیارہ مار گرایا گیا۔

دوسری جانب یمنی ذرائع نے بتایا ہے کہ باغی حوثی ملیشیا نے الحدیدہ صوبے کے شہر زبید میں اسلحے کے زور پر شہریوں کو ڈرا دھمکا کر اس بات پر مجبور کر دیا کہ وہ جنگی اخراجات کے لیے عطیات دیں۔ حوثی ملیشیا نے شہر کے لوگوں اور کاروباری افراد کے پاس اپنے ارکان کو بھیجا اور انہیں بڑی رقوم کی ادائیگی پر مجبور کیا اور ساتھ ہی عندیہ دیا کہ انکار کرنے والوں کو اغوا کر لیا جائے گا۔

ذرائع کے مطابق باغی ملیشیا نے اعلان کیا کہ جن دکانوں اور طبی ڈسپنسریوں کے مالکان "جنگی عطیات" نہیں دیں گے تو انہیں بند کر دیا جائے گا۔

الحدیدہ میں باغی حوثی ملیشیا اقوام متحدہ کی جانب سے اعلان کردہ جنگ بندی سے فائدہ اٹھا کر یہ کارستانیاں انجام دے رہی ہے تا کہ مغربی ساحل کے معرکوں میں ہونے والے بھاری نقصان کو پورا کیا جا سکے۔ حوثیوں کی جانب سے زبید شہر کے مقامی لوگوں کو رقوم کی ادائیگی اور شہر کے بعض نوجوانوں کو جبری بھرتی پر مجبور کیا جا رہا ہے۔ یہاں پر لڑائی میں باغی اپنے بہت سے اسلحے اور عسکری ساز و سامان سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔ علاوہ ازیں وہ اپنے جنگجوؤں کو تنخواہوں کی ادائیگی سے بھی قاصر ہیں۔