.

ابو بکر البغدادی کے ٹھکانے کا کوئی علم نہیں:امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے لیے امریکی خصوصی ایلچی جیمز جیفری نے کہا ہے کہ 'داعش' کے سربراہ ابوبکر البغداد کے ٹھکانے کے بارے میں کوئی پتا نہیں چل سکا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایک بیان میں مسٹرجیفری کا کہنا تھا کہ تازہ ترین انٹیلی جنس رپورٹ کے مطابق امریکی افواج کو اس مقام کے بارے میں کوئی علم نہیں جہاں دہشت گرد تنظیم 'داعش' کا سرغنہ ابوبکر البغدادی روپوش ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ شام یا عراق میں بھی البغدادی کی کوئی مصدقہ اطلاع نہیں ہے ۔

انہوں نے کہا کہ یہ خیال غلط ثابت ہوگیا کہ البغدادی کو موصل میں محصور کر دیا گیا ہے اور وہ مسلسل اپنی جگہ تبدیل کر رہا ہے۔ ایک امریکی ٹی وی چینل کے مطابق امریکی عہدیدار نے مزید بتایا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اقتدار سنبھالنے کے پہلے ہفتے سے ہی انسداد دہشت گردی کی امریکی ٹیمیں یہ سمجھ رہی تھیں کہ انہوں نے اس جگہ کا پتا چلالیا ہے جہاں داعش کا سرغنہ روپوش ہے ، لیکن تازہ ترین انٹیلی جنس رپورٹ نے اس خیال کو غلط ثابت کر دیا کیونکہ مختلف ذرائع سے یہ تصدیق ہو گئی ہے کہ البغدادی اب موصل میں نہیں ہے اور نہ ہی شام میں اس کا کوئی پتا چلا ہے۔

جیمز جیفری نے شام میں 'داعش' کے آخری گڑھ پر کرد فورسز کے قبضے کو عظیم فتح قرار دیا اور کہا کہ عراق کے بعد شام سے بھی داعش کو کو ختم کردیا گیا ہے۔