.

یمنی فوجی افسر کا حوثیوں سے گاڑی وصول کرنے پر والد سے لا تعلقی کا اظہار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی آئینی فوج میں شامل ایک کیپٹن نے اپنے والد اور العود قبیلے کے سرکردہ رہ نما کے ساتھ لا تعلقی کا اظہار کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق کیپٹن حمد عبدالواحدی الصیادی نے اپنے والد عبدالواحد کی ایک فوٹیج پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے ان کا اپنے والد کے اقدام کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس فوٹیج میں کیپٹن حمید کے والد کو حوثی لیڈر کی طرف سے تحفےمیں دی گئی گاڑی کی چابی وصول کرتے دیکھا جاسکتا ہے۔

اس ویڈیو کے منظرعام پر آنے کے بعد کیپٹن حمید عبدالواحد نے کہا ہے کہ میری بندوق حوثیوں کے خلاف چلتی رہے گی۔ مُجھے اس بات پر فخر ہے کہ میں اپنی قوم، آئینی حکومت اور صدر عبد ربہ منصور ھادی کے لیے کام کر رہا ہوں۔ ہم ملک اور قوم کے دفاع کے لیے لڑ رہے ہیں اور مقصد میں اپنی جانیں دینے کے لیے تیار ہیں۔ جہاں تک میرے والد کا حوثی لیڈر کی طرف سے دی گئی گاڑی تحفے میں لینے کی بات ہے تو اس کا میری ذات کی حد تک کوئی تعلق نہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ آل الصیادی قبیلے کے ارکان نے قوم اور ملک کے لیے قربانیاں دی ہیں۔ ہمارے قبیلے کو بدنام کرنے کے لیے غلط فہمیاں پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ انہوں‌ نے کہا کہ میں نے چار سال قبل اپنے والد سے ملاقات کی تھی۔ اس کے بعد میرا ان کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں رہا ہے۔ اگر انہوں نے حوثی لیڈر کی طرف سے تحفے میں دی گئی گاڑی وصول کی ہے تو یہ ان کا اپنا معاملہ ہے۔ اس کے ساتھ میرا کوئی تعلق نہیں۔