.

داعش کے چار ہزار جنگجو ایس ڈی ایف کی قید میں ، بن لادن اطالوی کی العربیہ سے گفتگو: قسط1

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ ٹیلی ویژن چینل کو شام میں داعش کے آخری گڑھ الباغوز کیمپ تک رسائی دی گئی ہے۔امریکا کی حمایت یافتہ شامی جمہوری فورسز ( ایس ڈی ایف) نے مارچ میں شام کے مشرقی صوبے دیر الزور میں واقع قصبے الباغوز پر قبضہ کر لیا تھا اور وہاں فیصلہ کن لڑائی کے دوران میں ایس ڈی ایف نے داعش کے چار ہزار سے زیادہ جنگجوؤں کو گرفتار کر لیا تھا۔ان میں ایک ہزار کے لگ بھگ غیرملکی ہیں۔

العربیہ کی رولا الخطیب نے ان میں سے متعدد قیدیوں سے سلسلہ وار انٹرویوز کیے ہیں۔ان میں اطالوی بن لادن کہلانے والا جنگجو بھی شامل ہے۔وہ انٹرویو میں بتاتا ہے کہ اس نے داعش میں کیسے شمولیت اختیار کی تھی اور اس تک کیسے پہنچا تھا؟

اس نے بتایا ہے کہ وہ ترکی کے راستے شام میں داخل ہوا تھا۔ وہاں اس نے جنگی تربیت حاصل کی تھی۔وہ گذشتہ برسوں کے دوران میں داعش کی صفوں میں شامل ہوکر لڑتا رہا تھا اور شام کے باقی علاقوں میں داعش کی شکست کے بعد وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ الباغوز منتقل ہوگیا تھا۔

وہ ایس ڈی ایف کے قبضے تک اپنے باقی جنگجو ساتھیوں کے ساتھ مل کر اس قصبے ہی میں رہتا رہا تھا تاآنکہ داعش کو شکست سے دوچار ہونا پڑا اور وہ گرفتار کر لیے گئے یا ان میں سے بعض جنگجوؤں نے ایس ڈی ایف کے سامنے ہتھیار ڈال دیے تھے۔