.

عمرالبشیر پر منی لانڈرنگ اور خطیر رقم چھپانے کے الزامات کی تحقیقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سوڈان کے ایک عدالتی ذریعے نے بتایا ہے کہ پراسیکیوٹری جنرل نے معزول صدر عمرالبشیر کے خلاف منی لانڈرنگ اور بھاری رقم چھپانے کی دو شکایات کی تحقیقات شروع کردی ہیں۔

خبر رساں‌ادارے"رائیٹرز" کے مطابق مسلح افواج کی عبوری کونسل کی طرف سے قائم کردہ قائم مقام پراسیکیوٹر کو سابق صدر کو گرفتار کرنے اور انہیں عدالت میں پیش کرنے کاحکم دیا ہے۔ عبوری کونسل کی طرف سے پراسیکیوٹر جنرل کوہدایت کی گئی ہےکہ وہ معزول صدر کے خلاف کرپشن اور منی لانڈرنگ کےالزامات کی فوری تحقیقات شروع کرے۔

پراسیکیوٹرجنرل کاکہنا ہے کہ سابق صدر عمر البشیر سے پوچھ گچھ کوبر جیل میں کی جائے گی۔سابق صدر اور ان کے ساتھیوں کے خلاف تمام قانونی تقاضوں کے مطابق تحقیقات کی جائیں گی۔

خیال رہے کہ سابق صدر عمرالبشیر کو گذشتہ منگل کو خرطوم کےساحلی علاقے میں قائم کوبر جیل منتقل کیا گیا۔

ذرائع کا کہنا ہےکہ عمر البشیر کو منگل کی شام کوبر جیل میں منتقل کیا گیا۔ انہیں دوسرے رہ نمائوں سے الگ تھلگ قیدتنہائی میں رکھا گیا ہے جہاں سیکیورٹی کےسخت انتظامات کیے گئے ہیں۔

قبل ازیں عمرالبشیر کے اہل خانہ کی طرف سے بتایا گیا تھاکہ سابق صدر کو وزارت دفاع کے ایک آڈیٹوریم میں منتقل کیا گیا ہے۔

تیس سال تک سوڈان کے صدر رہنے والی عمر البشیر کو گذشتہ ہفتے عوامی احتجاج کے بعد فوج نے برطرف کردیا تھا۔ عالمی عدالت انصاف نے بھی انہیں اشتہاری قراردے رکھا ہے اوران پر دارفر صوبے میں انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوث ہونے کا الزام عایدکیاگیا ہے۔