.

وسطی شام میں 'داعش' کے حملےمیں اسدی فوج کے 35 اہلکار ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے وسطی علاقے مشرقی حمص میں 'داعش' کے جنگجوئوں‌کے حملے میں اسدی فوج کے کم سے کم 35 فوجی اور ان کے وفادار جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

شام میں انسانی حقوق کی صورت حال پر نظر رکھنے والی تنظیم آبزر ویٹری فارہیومن رائٹس کی طرف سے جاری کردہ بیان میں‌ کہا گیاہے کہ گذشتہ 48 گھنٹوں کےدوران حمص میں ایک مقام پر 25 اور دوسرے پر 10 شامی فوجی اور اس کے وفادار جنگجو ہلاک ہوگئے۔

انسانی‌ حقوق کے آبزرور رامی عبدالرحمان نے بتایا کہ حمص میں داعش کے حملے میں ہلاک ہونے والے شامی فوجیوں‌میں 4 سینیرافسران شامل ہیں۔

دوسر جانب داعش نے ٹیلی گرام پر جاری ایک بیان میں حمص میں شامی فوجیوں‌کو بھاری جانی نقصان پہنچانے کا دعویٰ کیا ہے۔ داعش نے حمص میں شامی فوج اور اس کے حامیوں کے قتل کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

حمص میں شامی فوج کی بڑے پیمانے پر ہلاکتوں کا یہ واقعہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب 23 مارچ کو امریکا اور دیگر اتحادیوں کی حمایت یافتہ کرد پروٹیکشن یونٹس کی طرف سے شام میں داعش کےخاتمے کااعلان کیا گیا تھا۔ مبصرین کہنا ہے کہ شام کی سرزمین سےداعش کو مکمل طورپرختم نہیں کیا جاسکا۔حمص میں اسدی فوج کی تازہ ہلاکتیں اس بات کا ثبوت ہیں کہ داعش اب بھی شام میں بھرپور قوت رکھتی ہے۔