حوثیوں کی جانب سے لُوٹ مار اور شہریوں کو بلیک میل کرنے کا سلسلہ جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

صنعاء میں باغی حوثی ملیشیا نے ریاستی اداروں پر اپنے قبضے سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مالی رقوم بٹورنے کی کارروائیوں میں اضافہ کر دیا ہے۔ حوثیوں نے آئینی حکومت کے زیر کنٹرول علاقوں سے آنے والے سامان اور بنیادی ضروریات کی اشیاء پر کسٹم ٹیکس عائد کر دیا ہے۔

حوثیوں نے سرکاری مال اور عوام کا پیسہ لُوٹنے کا بازار گرم کر رکھا ہے اور اس واسطے وہ مختلف حیلوں کا سہارا لیتے ہیں۔

شہروں میں داخلے کے راستوں اور مرکزی شاہراہوں پر چیک پوائنٹس کا جال پھیلا ہوا ہے جہاں حوثی عناصر کی بلیک میلنگ عروج پر ہے۔ وہ آئینی حکومت کے زیر کنٹرول علاقوں سے آنے والے سامان یہاں تک کہ گیس اور پٹرولیم مصنوعات لانے والے ٹینکروں پر بھی چنگی وصول کر رہے ہیں۔

صنعاء میں حوثیوں کے زیر کنٹرول کسٹم کے محکمے نے گاڑیوں کے مالکان کو پابند کر دیا ہے کہ وہ آئینی حکومت کے زیر کنٹرول سرحدی گزر گاہوں پر اپنی گاڑیوں سے متعلق کسٹم ڈیوٹی ادا کرنے کے بعد حوثیوں کے علاقے میں پہنچ کر دوبارہ کسٹم ڈیوٹی ادا کریں۔ گاڑیوں کے مالکان کا شکوہ ہے کہ حوثی ملیشیا نے منظم لوٹ مار کا طریقہ اپناتے ہوئے اچانک گاڑیوں کی کسٹم ڈیوٹی کو 30% سے بڑھا کر 50% کر دیا ہے۔

مقامی ذرائع نے بتایا ہے کہ حوثیوں کے بروکر محکمہ کسٹم کی عمارت میں منڈلا رہے ہوتے ہیں تا کہ گاڑیوں یا سامان کے مالکان سے رشوت لے کر کسٹم ڈیوٹی میں کمی کروا دیں یا پھر دفتری معاملات کو جلد مکمل کروا دیں۔ باغی ملیشیا کے زیر قبضہ سرکاری اداروں میں بدعنوانی کی یہ صورت تیزی سے پھیل رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں