اقتدار کی منتقلی کے لیے افریقی یونین کی 3 ماہ کی مہلت ، سوڈانی عبوری کونسل کا خیر مقدم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان میں عبوری کونسل کے سربراہ لیفٹننٹ جنرل عبدالفتاح البرہان نے افریقی سربراہ اجلاس کے اس موقف کا خیر مقدم کیا ہے جس میں اقتدار کی منتقلی کے لیے سوڈانی عبوری کونسل کو تین ماہ کی مہلت دی گئی ہے۔

البرہان نے روسی خبر رساں ایجنسی کو دیے گئے بیان میں باور کرایا کہ شہری حکومت مقررہ عبوری مدت کے دو سال ختم ہونے سے پہلے ہی کام شروع کر دے گی۔ انہوں نے واضح کیا کہ سوڈان کو ایک آزاد اور جمہوری مستقبل کی سمت لے جانے کے لیے عبوری کونسل ملک میں تمام فریقوں کے ساتھ رابطوں کی کوششیں جاری رکھے گی۔

اس سے قبل قاہرہ میں افریقی یونین کے سربراہ اجلاس میں مطالبہ کیا گیا تھا کہ سوڈان میں اقتدار تین ماہ کے اندر پر امن طور پر منتقل کر دیا جائے۔

دوسری جانب امریکی وزارت خارجہ کی ایک ذمے دار نے باور کرایا ہے کہ واشنگٹن سوڈانیوں کے "قانونی مطالبے" کی حمایت کرتا ہے جس میں ایک ایسی حکومت تشکیل دینے پر زور دیا گیا ہے جس کی قیادت ایک شہری شخصیت کے ہاتھ میں ہو۔

امریکی وزارت خارجہ میں افریقی امور کی ذمے دار میکیلا جیمز نے جو ان دنوں خرطوم کا دورہ کر رہی ہیں ،،، کہا کہ ان کے دورے کا مقصد سوڈانیوں کی اس بات پر حوصلہ افزائی کرنا ہے کہ وہ جلد از جلد ممکنہ وقت میں اقتدار کی شہری فریق کو منتقلی کے واسطے مل کر کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ سوڈان کے عوام واضح طور پر اس بات کا اظہار کر چکے ہیں کہ وہ کیا چاہتے ہیں۔

قاہرہ نے گزشتہ روز منگل کو افریقی یونین کے سربراہان کی سطح پر دو اجلاسوں کی میزبانی کی۔

پہلے اجلاس میں سوڈان کی صورت حال اور وہاں امن و استحکام کے حوالے سے مضبوط خطوط پر کام کرنے کے امور زیر بحث آئے۔

دوسرے اجلاس میں لیبیا میں تازہ ترین پیش رفت، حالیہ بحران کو قابو کرنے، سیاسی عمل کو زندہ کرنے اور دہشت گردی کے خاتمے کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال ہوا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں